3740خستہ حا ل عمارتیں خطرناک قرار 1840کو نو ٹس

3740خستہ حا ل عمارتیں خطرناک قرار 1840کو نو ٹس

  

لاہور(جاوید اقبال) صوبائی دارالحکومت میں 1840خستہ حال عمارتوں کو ”مون سون“ سے قبل ضلعی حکومت اور ٹاﺅنوں نے خانہ پری کے لئے نوٹس جاری کر کے کاغذی کارروائی مکمل کر لی ہے مجموعی طور پر9ٹاﺅنوں کی حدود میں 6570ایسی خستہ حال عمارتیں موجود ہیں جنہیں بارش کے لئے خطرناک قرار دیا جا چکا ہے حالیہ مون سون سے قبل ان کی تعداد کم کر کے 3740کر دی گئی ہے تاہم 1840عمارتوں کو خطرناک قرار دیتے ہوئے نوٹس جاری کئے گئے ہیں جن کے مالکان اور کرایہ داران سے کہا گیا ہے کہ ان کی عمارتوں کو خطرناک قرار دیا گیا ہے ان سے رہائش چھوڑ دیں یہ مرمت کرا لیں۔یہ ریہرسل ٹاﺅن اور ضلعی حکومت ہر سال کرتی ہے جو موسم برسات شروع ہونے سے قبل کی جاتی ہے مون سون گذرتے ہی فائلیں بند کر دیتی ہے اس دفعہ بھی ایسا ہی کیا گیا ہے صرف 1840عمارتوں کو خطرناک قرار دے کر نوٹس جاری کئے گئے ہیں جو صرف ٹاﺅنوں نے کسی عمارت کے گرنے کی صورت میں اپنی اپنی ”سکن“ بچانے کے لئے کیا گیا ہے یہ خستہ حال عمارتیں زیادہ تر راوی ٹاﺅن کی حدود میں اندرون شہر کے اندر ہیں جو قریبی رہائشیوں کے لئے ”موت“ کی مانند حیثیت رکھتی ہیں۔تفصیلات کے مطابق صوبائی دارالحکومت کے 9ٹاﺅنوں کی حدود میں 6500سو سے زائد عمارتوں کو خستہ حال قرار دے کر رہائش کے لئے ممنوعہ قرار دیا گیا۔ بتایا گیا ہے کہ خطرناک قرار دی گئی عمارتوں میں پہلے نمبر راوی ٹاﺅن ہے جس کی حدود میں 12سو سے زائد خطرناک قدیم اور خستہ حال عمارتیں ہیں۔دوسرے نمبر پر داتا گنج بخش ٹاﺅن ہے جس کی حدود میں تین سو سے زائد خطرناک خستہ حال اور ٹوٹی پھوٹی عمارتیں موجود ہیں تیسرے نمبر پر شالا مار ٹاﺅن اور عزیز بھٹی ٹاﺅن سمن آباد ٹاﺅن اقبال ٹاﺅن اور نشتر ٹاﺅن گلبرگ ٹاﺅن ،مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ عمارتیں اس قدر خستہ حال ہیں کہ ان سے قریبی عمارتوں یا رہائشیوں کو شدید خطرات لاحق ہیں بارش کے وقت ان خستہ حال پرانی عمارتوں کے قریب گھروں میں رہنے والے رات کو سو نہیں سکتے اور بارش ختم ہونے کی رعائیں مانگتے رہتے ہیں انہوں نے کہا کہ ان عمارتوں کو گرایا جائے یا مسمار کیا جائے تاکہ لوگ سکھ کا سانس لیں۔ تاہم رہائش کے بارے میں بتایا گیا ہے کہ زیادہ تر کرایہ دار ہیں اور وہ مکانات خالی کرنا نہیں چاہتے اس حوالے سے ڈی سی او لاہور نور الامین مینگل سے بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ کارروائی کے ٹاﺅنوں کو ہدایات جاری کر دی گئی ہیں خطرناک اور خستہ حال عمارتوں کے خلاف کارروائی قانون کے مطابق ہو گی۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -