سعودی عرب ایک اور دہشت گرد بھارت کے حوالے کرے گا واشنگٹن پوسٹ

سعودی عرب ایک اور دہشت گرد بھارت کے حوالے کرے گا واشنگٹن پوسٹ

  

واشنگٹن (این این آئی) امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ سعودی عرب ایک اور دہشت گرد بھارت کے حوالے کریگا ¾ بھارت اور سعوی عرب کے درمیان نئے سفارتی تعلقات کا مطلب پاکستان سے دوری نہیں ہے۔امریکی اخبار کے مطابق گزشتہ ہفتے ممبئی حملوں میں ملوث ایک بھارتی شہری کو سعوی عرب سے ملک بدر کرکے بھارت کے حوالے کرنے سے ظاہر ہوتا ہے کہ بھارت اور سعوی عرب کے درمیان تعلقات میں کافی تبدیلیا ں آچکی ہیں اطلاعات کے مطابق سعودی عرب آئندہ چند ہفتوں میں ایک اور مشتبہ دہشت گرد کو بھارت کے حوالے کرنے جا رہا ہے اخبار کے مطابق ایک سینئر انٹیلی جنس افسر نے نام ظاہر نہ کرنے پر بتایا کہ بھارتی دہشت گردوں کے پاکستان میں رہنے اور نئے نام اور پاسپورٹ سے سعودی عرب کا سفر محفوظ نہیں رہا مئی میں سعودی عرب پولیس نے بھارتی مشتبہ دہشت گرد فصیح محمودکو گرفتار کر لیا تھا جسے اب بھارت کے حوالے کیا جائے گا تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ نئی دہلی کی طرف ریاض کی پالیسی میں یہ تبدیلی 11ستمبر2001ءکے بعد سعودی عرب کی وسیع تر خارجہ پالیسی کا حصہ ہے.اخبار نے ایک سابق بھارتی سفیر کے حوالے سے لکھا کہ یہ بھارت کےلئے سعودی عرب کی طرف سے ملک بدری کا پہلا واقعہ ہے جو کہ بھارت کی جانب سعودی عرب کے رویے اور سعودی معاشرے میں اندرونی تبدیلیوں کا اشارہ ہے۔اخبار کے مطابق سعودی عرب نے بھی پورے عرب خطے میں بھارت کو ایک مثالی رسائی دی ہے اخبارنے لکھا ہے کہ سعودی عرب ان تمام برسوں میں بھارت کا بالکل دوست نہیں رہا ،درحقیقت سعودی عرب نے ہمیشہ بین لاقوامی پلیٹ فارم پر پاکستان کے موقف کی اصولی حمایت کی اور خاص کر کشمیر کے مسئلے پر سعودی عرب پاکستان ساتھ کھڑارہا۔اخبار کے مطابق2006ءکے بعد سے ریاض کے بھارت کے ساتھ سفارتی تعلقات میں تبدیلی آئی جب شاہ عبداللہ نے نئی دہلی کا دورہ کیا 2010 ءمیں دونوں ممالک کے درمیان توانائی، انسداد دہشت گردی، منشیات کی اسمگلنگ، منی لانڈرنگ اور حوالگی سمیت کئی معاہدوں پر دستخط ہوئے.ایک سال پہلے ریاض نے بھارت کے لئے تیل کی برآمدات کو دوگنا کرنے پر اتفاق کیا تاکہ بھارت کا ایران پر انحصار کم ہو۔

مزید :

ایڈیشن 1 -