کراچی: پرتشدد واقعات، 6 ماہ میں 1257 افراد ہلاک ہوگئے، ہیومن رائٹس کمیشن

کراچی: پرتشدد واقعات، 6 ماہ میں 1257 افراد ہلاک ہوگئے، ہیومن رائٹس کمیشن

  

کراچی (ثناءنیوز) ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان کی تازہ ترین رپورٹ کے مطابق کراچی میں پرتشدد واقعات میں چھ ماہ کے دوران 1257 افراد ہلاک ہوئے۔ ٹارگٹ کلنگ ان اموات کا سب سے بڑا سبب رہی۔ سیاسی رنجشوں اور ناجائز اسلحہ کی آسان دسترس نے 135 سیاسی کارکنوں کو موت کی نیند سلا دیا۔ ایچ آر سی پی کی رپورٹ کے مطابق فرقہ ورانہ فسادات بھی ان چھ ماہ میں کچھ کم نہیں ہوئے۔ ان کے باعث 27 افراد کو فرقہ وارانہ نفرتوں کی بھینٹ چڑھنا پڑا۔ ایچ آر سی پی کی رپورٹ کے مطابق فرقہ ورانہ فساات بھی ان چھ ماہ میں کچھ کم نہیں ہوئے اور ان کے باعث 27 افراد کو فرقہ ورانہ نفرتوں کی بھینٹ چڑھنا پڑا۔ لیاری گینگ وار میں 84 افراد نے اپنی جانوں سے ہاتھ دھوئے۔ رواں سال چھ ماہ کی مدت میں 44 پولیس اہلکار بھی مختلف واقعات میں موت کے منہ میں چلے گئے۔ دوسری جانب قانون نافذ کرنے والے اداروں اور پولیس کے ساتھ مقابلوں میں 48 افراد ہلاک ہوئے۔ رپورٹ کے مطابق ایسی بدقسمت خواتین کی تعداد 24 تھی جنہیں ان کے ہی رشتے داروں نے ہی ہمیشہ کے لئے موت کی نیند سلا دیا جبکہ 12 خواتین ایسی بھی تھیںجونامعلوم ملزمان کی گولیوں کا نشانہ بنیں۔ چار کو زندہ جلا دیا گیا، چار کو لیاری گینگ وار میں اندھی گولیوں کا نشانہ بننا پڑا جبکہ چار خواتین ڈاکوﺅں کا شکارہوئیں۔ بارہ کو کاروکاری قرار دے کر قتل کردیا گیا۔ یہی نہیں بلکہ چھ ماہ کے دوران 64 معصوم بچے بچیوں کو بھی موت کو گلے لگاناپڑا۔ ان واقعات کا ایک افسوسناک پہلو یہ بھی ہے کہ 1200 سے زائد افراد میں ایک بڑی تعداد ان لوگوں کی بھی شامل ہے جو ناگہانی موت کی لپیٹ میں آگئے۔ حالانکہ ناتواں کا تعلق کسی سیاسی جماعت سے تھا اور نہ ہی وہ کسی قسم کے تشدد میں شریک تھے بلکہ ان کا قصور صرف اتنا تھا کہ وہ غلط وقت پر غلط جگہ موجود تھے۔ سال 2012 کا سب سے خطرناک مہینہ اپریل تھا جس میں 260 افراد ہلاک ہوئے۔ ٹارگٹ کلنگ کے بعد سب سے زیادہ اموات لیاری آپریشن کے دوران ہوئیں۔ لیاری آپریشن کا مقصداگرچہ جرائم پیشہ افراد کا خاتمہ تھا لیکن اس سے سب سے زیادہ عام آدمی متاثر ہوا۔ لیاری گینگ وار میں چھ ماہ میں 92 افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔ 2012ءمیں سب سے زیادہ اموات سیاسی کارکنوں کی ہوئیں۔ ایچ آر سی پی کی رپورٹ کے مطابق سب سے زیادہ متحدہ قومی موومنٹ کے کارکنوں کو تشدد کرکے قتل کیا گیا حالانکہ متحدہ حکومت کی اتحادی جماعت ہے، صرف جون کے مہینے میں 28 سیاسی کارکنوں میں سے متحدہ کے ہلاک ہونے والے کارکنوں کی تعداد 22 تھی۔

مزید :

صفحہ آخر -