کرونا متاثرہ مریض جاں بحق‘ورثاء کا ٹیچنگ ہسپتال ڈیرہ میں ہنگامہ

  کرونا متاثرہ مریض جاں بحق‘ورثاء کا ٹیچنگ ہسپتال ڈیرہ میں ہنگامہ

  

ڈیرہ غازیخان (سٹی رپورٹر):کرونا کے مریض کے جاں بحق ہونے پر لواحقین کا ٹیچنگ ہسپتال ڈیرہ غازیخان کے وارڈ پرحملہ، وارڈ کے شیشے توڑ دئیے، اندر گھس کر ڈاکٹروں کو زدوکوب کرنے کی کوشش، ڈاکٹروں نے وارڈ میں چھپ کر جان بچائی، حکومت تحفظ فراہم(بقیہ نمبر4صفحہ6پر)

کرے وائی ڈی اے ڈاکٹرز تفصیلات کے مطابق گزشتہ رات ٹیچنگ ہسپتال میں موجود بلاک تین کا رہائشی کرونا کے ایک مریض ظفر اقبال چانڈیہ کی حالت اچانک سریس ہوگئی اور اس کا سانس اکھڑنے لگا ڈیوٹی پر موجودڈاکٹرزفوراً پہنچ گئے اور مریض کو آکسیجن کے ذریعے مصنوعی سانس دینے لگے اور مریض ظفر اقبال کی حالت تشویش ناک ہو گئی کچھ دیر بعدمریض جانبر نہ ہو سکا اور دم توڑ گیا مریض کے جاں بحق ہو نے کی اطلاع ملتے ہی لواحقین مشتعل ہوگئے اور ڈاکٹرز کو زدوکوب کرنے کے لئے ٹیچنگ ہسپتال کے کرونا وارڈ پر حملہ کردیا اور وارڈز کے شیشے اور دروازے توڑ دئیے ڈاکٹر اور دیگر عملہ نے خود کو مشتعل لواحقین کے تشدد سے محفوظ رکھنے کے لیے دفتر میں چھپ کر دروازے بند کر دئیے اور انتظامیہ، وائی ڈی اے اور ہسپتال سکیورٹی سے مدد کے لئے رابطہ کیاجس کے بعدوائی ڈی اے ڈی جی خان کی بروقت مداخلت سے عملہ محفوظ ہوگیا اور کسی قسم کا جانی نقصان نہ ہوسکا تاہم وہ ہسپتال ڈاکٹرز کے خلاف نعرہ بازی اور احتجاج کرتے رہے اس موقع پر ڈاکٹر مُجاہد لغاری سینئرنائب صدر وائی ڈی اے پنجاب،ڈاکٹر انجم بلوچ سرپرست اعلیٰ وائی ڈی اے، ڈاکٹر نعمان چوہدری صدر وائی ڈی اے ڈیرہ غازیخان، ڈاکٹر مُحمد شہزاد آغاچئیرمین وائی ڈی اے ڈیرہ غازیخان، ڈاکٹر ہدایتُ اللہ کھوسہ جنرل سیکرٹری وائی ڈی اے نے مشترکہ بیان میں کہا کہ سکیورٹی کے انتہائی مخدوش حالات کی وجہ سے پنجاب بھر میں آئے دن اس طرح کے واقعات رونُمارہے ہیں اور ہمیشہ فرنٹ لائن پر خدمات سرانجام دینے والے عملہ کو تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے مریض کی موت کا ذمہ دار بیماری کی بجائے عملہ کو قرار دینا زیادتی ہے وائی ڈی اے ڈیرہ غازیخان اور وائی ڈی اے پنجاب کا وزیرِ اعلٰی پنجاب اور وزیرِ صحت ڈاکٹر یاسمین راشد سے اپنا دیرینہ مطالبہ کیا کہ ہسپتالوں میں سکیورٹی بِل کو لاگو کیا جائے تاکہ صحت کا عملہ سُکون سے اپنے فرائض سرانجام دے سکے اس سلسلے میں رابطہ کر نے پر میڈیافوکل پرسن ٹیچنگ ہسپتال ڈاکٹر خالد تحسین نے بتایا کہ مریض کی جان بچانے کے لئے ڈاکٹر ز نے اپنے فرائض بخوبی سرانجام دیتے ہو ئے ہر ممکن کوشش کی لیکن وہ جانبر نہ ہو سکا تاہم لواحقین کی طرف سے ٹیچنگ ہسپتال میں توڑ پھوڑ اور سرکاری املاک کو نقصان پہنچانے پر پرنسپل میڈیکل کالج،کمشنر،ڈی سی اور ڈی پی او کو قانونی کاروائی کے لئے تحریری طور پر لیٹر ارسال کر دیا ہے۔

ہنگامہ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -