حکومت دفاع اور تنخوا ہ دار طبقے پر کٹ نہیں لگا سکتی،اسحاق ڈار

حکومت دفاع اور تنخوا ہ دار طبقے پر کٹ نہیں لگا سکتی،اسحاق ڈار

 اسلام آباد(آن لائن)وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ حکومت دفاع،اندرونی بیرونی قرضے اور تنخواہ دار طبقے پر کٹ نہیں لگا سکتی ہے،حکومت کو چار چیلنجز ہیں ،معیشت،انسداد دہشتگردی،تعلیم اور صحت ان پر توجہ مرکوز کی ہوئی ہے۔نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے اسحاق ڈار کا کہنا تھا کہ حکومت کی اچھی معاشی کارکردگی کے باعث ملک کے زرمبادلہ کے ذخائر8 ارب ڈالر سے بڑھ کر17ارب ڈالر ہوچکے ہیں،ترقیاتی بجٹ2سال میں325 ارب سے بڑھ کر700ارب روپے کردیا ہے،حکومت نے بیروزگاری کے خاتمے کیلئے زراعت اور صنعتکاروں کو بجٹ میں مراعات دی ہے،مصروف معاشی تجزیہ نگاروں نے ملک کی معاشی سمت درست قرار دی ہے،ملک کے معیشت کو نقصان اسلام آباد میں دھرنوں کی وجہ سے ہوا ہے،اب معاشی ترقی کی رفتار بتدریج بڑھ رہی ہے،حکومت ملک میں توانائی کے مختلف منصوبوں پر کام کر رہا ہے اس وقت ملک کو ساڑھے چار ہزار میگاواٹ کی کمی کا سامنا ہے،دسمبر2017ء تک ایل این جی کے ذریعے36 سو میگاواٹ آئندہ2سال میں لگیں گے،توانائی بحران کے خاتمے کے ساتھ جی ڈی پی بھی بڑھے گی۔انہوں نے کہا کہ آئندہ معاشی ترقی کا ہدف پانچ اعشاریہ پانچ فیصد حاصل کرلینگے،ملکی ترقی کیلئے معیشت سیاست کی نظر نہ کیا جائے،بجٹ خسارے کو کم کرنا حکومت کی اولین ترجیح ہے،وفاقی بجٹ کے حوالے سے تمام سیاسی جماعتوں کے جانب سے تجاویز کا خیرمقدم کرینگے،چارٹر آف اکانومی بنائے تو معیشت کے حوالے سے یہ اقدام سے تمام سیاسی جماعتوں کو اعتماد میں لینگے۔انہوں نے کہا کہ حکومت توانائی کے مختلف منصوبوں پر کام کر رہا ہے،30ہزار ٹیوب ویل کو شمسی توانائی پر منتقل ہوگی،ان کا کہنا تھا کہ ہم نے بجٹ میں براہ راست ٹیکس لگا دیتے ہیں،ان کا تعلق غریب عوام سے نہیں ہوتا ہے،براہ راست ٹیکس عائد کرنے کی شرح 3فیصد بڑھی ہے،دنیا میں پاکستان چوتھے نمبر پر ہیں کہ یہ پارلیمنٹیرین ٹیکس ادا کرتے ہیں،اس حوالے سے سالانہ ٹیکس ڈائریکٹوں جاری کیا جاتا ہے وہ ایف بی آر کی ویب سائٹ پر موجود ہوتے ہیں

اسحا ق ڈار

مزید : صفحہ آخر