پرویزمشرف کادور ہوتاتوروہنگیا کے مسلمان قتل نہ ہوتے، الطاف شاہد

پرویزمشرف کادور ہوتاتوروہنگیا کے مسلمان قتل نہ ہوتے، الطاف شاہد

لاہور((پ ر)آل پاکستان مسلم لیگ یورپ وبرطانیہ کے مرکزی چیف ایڈوائزر چودھری محمدالطاف شاہدنے کہا ہے کہ اگرپاکستان میں پرویزمشرف کا دور اقتدار ہوتا تو روہنگیا کے مسلمان بے سہارا نہ ہوتے۔پرویز مشرف کے دورصدارت میں پڑوسی ملک بھارت کے مسلمان بھی خودکوکافی محفوظ تصورکرتے تھے مگرآج مقبوضہ کشمیرمیں ظلم کابازارگرم ہے ایوان وزیراعظم سے کبھی صدائے احتجاج تک بلندنہیں ہوئی۔جومسلم حکمران روہنگیا ،فلسطین اورکشمیرکے مظلوم مسلمانوں کی سیاسی ،سفارتی اوراخلاقی مددنہیں کرسکتے وہ قابل نفرت اورقابل گرفت ہیں۔پرویز مشرف کی قیادت میں پاکستان دنیا کے ہر اہم فیصلے میں اپناکلیدی کرداراداکرسکتا ہے،شریف برادران میں ایساکرنے کی قابلیت اورصلاحیت نہیں ہوسکتی ۔ وہ ایک ورکرزکنونشن سے خطاب کررہے تھے ۔چودھری محمدالطاف شاہد نے مزیدکہا کہ جس نے زندگی بھرپیسہ بنایا ہووہ سردھڑکی بازی نہیں لگاسکتا ،پرویز مشرف سراپاانسانیت اورجمہوریت کی علامت ہیں۔پرویز مشرف کے دورمیں پاکستان کی اقلیتوں کوبھرپورمذہبی آزادی حاصل تھی۔انہوں نے کہا کہ روہنگیا کے مسلمانوں کی حالت زاردیکھی نہیں جاتی ،ہمارے دل خون کے آنسورورہے ہیں جبکہ حکمران بھائیوں نے قومی وسائل کارخ عوام کی بجائے میٹر وبس کی طرف موڑدیاہے ۔اسلامی ملکوں میں ڈیلر بہت ہیں مگر پرویز مشرف کی طرح کادوسراکوئی لیڈر نہیں ہے۔دبنگ اورنڈرپرویز مشرف کی طرح کوئی مقتدرقوتوں کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کربات نہیں کرسکتا ۔انہوں نے کہا کہ اگرکسی اسلامی ملک میں کسی اقلیت سے تعلق رکھنے والے انسان کی جان چلی جائے تومغرب میں آسمان سرپراٹھا لیا جاتا ہے جبکہ برما میں ہزاروں کی تعدادمیں مسلمانوں کوناحق قتل کیا گیا مگرامریکہ سمیت کسی مغربی ملک سے ان کے حق میں آوازنہیں ابھری ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1