بجٹ نہ توکاروبار دوست ہے ، نہ ہی عوام دوست: سراج قاسم تیلی

بجٹ نہ توکاروبار دوست ہے ، نہ ہی عوام دوست: سراج قاسم تیلی

کراچی(آن لائن) بزنس مین گروپ کے چیئرمین سراج قاسم تیلی نے اعلان کردہ وفاقی بجٹ میں ٹیکس اہداف کے حصول کے لیے پہلے سے رجسٹرڈ ٹیکس دھندگان کونشانہ بنانے پرتشویش کا اظہار کرتے ہوئے حکومت پر واضح کیا ہے کہ بجٹ نہ توکاروبار دوست ہے اور نہ ہی عوام دوست۔ انہوں نے کہا کہ بجٹ میں ریونیو اہداف بڑھاکر پہلے سے ٹیکس نیٹ میں شامل لوگوں کومزید نچوڑ نے کی پالیسی اختیار کی گئی ہے جبکہ قابل ٹیکس آمدنی کے حامل ٹیکس نیٹ سے باہرشعبوں و افراد کو مزیدپرآسائش زندگی سے لطف اندوزہونے کے مواقع فراہم کیے گئے ہیں۔گزشتہ روز ایک بیان میں سراج قاسم تیلی نے کہاکہ بجٹ دستاویز کا تفصیلی جائزہ لینے کے بعدکراچی کے تاجروصنعتکاربرادری کے نمائندے اپنی حکمت عملی ترتیب دیں گے۔

اوراگرضرورت محسوس ہوئی توبجٹ کے خلاف پرامن احتجاجی لائحہ عمل بھی اختیارکیاجائے گا۔انہوں نے کہاکہ وفاقی بجٹ میں کراچی چیمبر کی ایک تجویز بھی شامل نہیں کی گئی ہے جوباعث تشویش ہے۔ پالیسی سازوں نے تاجر وصنعتکاربرادری کومتاثر کرنے والے فیصلے انہیں آن بورڈ لیے بغیر کیے، کراچی چیمبرملک پریمیرچیمبر ہے جس کا مطالبہ تھا کہ فیڈرل بورڈ آف ریونیو کے مختلف شعبوں کو دیے گئے بے جا صوابدیدی اختیارات کو ختم کیا جائے لیکن حکومت نے اس اہم مطالبے کو پس پشت ڈال دیا۔سراج تیلی نے بجٹ میں ایس آراوکلچرکے خاتمے سمیت بعض دیگرمثبت اعلانات کا خیر مقدم کیا۔ بی ایم جی کے وائس چیئرمین زبیر موتی والا نے خیبرپختونخوا کو بجٹ میں ملنے والی مراعات کو سراہتے ہوئے مطالبہ کیا کہ اسی قسم کی مراعات سندہ صوبے کو بھی دی جائیں کیونکہ سندہ بھی خیبرپختونخوا کی طرح آفت زدہ اور دہشت گردی کا شکار رہا ہے۔کراچی چیمبر کے صدر افتخار احمد وہرہ نے کہا کہ موجودہ ٹیکس نظام اور اس کے نفاذ کا ازسرنو جائزہ لیا جائے اورواضح حکمت عملی مرتب کرکے ایف بی آر کے بے جا اختیارات کو ختم کیاجائے۔ انہوں ٹیکس کے اہداف میں اضافے کو کڑی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ اس کے کہ کے منفی نتائج تاجر برادری کے ساتھ ساتھ عام عوام کو بھی بھگتنے پڑیں گے۔

مزید : کامرس