خواہش ہے ایسا صدر بنوں کہ دنیا مجھے کینسر کے خاتمے کے طور پر یاد رکھے، جوبائیڈن

خواہش ہے ایسا صدر بنوں کہ دنیا مجھے کینسر کے خاتمے کے طور پر یاد رکھے، ...

نیو یارک (آن لائن)امریکی نائب صدر جو بائڈن نے کہا ہے کہ کینسر کے علاج کے لیے اسی تیزی اور تندہی کے ساتھ کا کام کیا جانا چاہیے جس طرح ایبولا کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے کیا گیا ہے۔انھوں نے کہا کہ میں نے خود کو ایک ایسے صدر کے طور پر دیکھا تھا جس نے کینسر کو قابلِ علاج کر دیا اور یہ یقین کیا کہ یہ ممکن ہے،وہ اب امریکہ کے کینسر (سرطان) کے علاج کے پروگرام ’کینسر مون شاٹ‘ کی سربراہی کر رہے ہیں،انھوں نے سائنسدانوں سے کہا ’ان کی کامیابی واقعتاً دنیا کو بدل کر رکھ دے گی لیکن انھوں نے کلینیکل جانچ میں حائل رکاوٹوں کو تنقید کا نشانہ بنایا،انھوں نے کلینیکل آنکولوجی کی امریکی تنظیم کے سالانہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم ایبولا سے پریشان تھے تو ہم لاکھوں کروڑوں ڈالر اکٹھا کرنے میں کامیاب ہوئے اور تمام امریکی فوج کو وہاں جھونکنے کو تیار ہو گئے کیونکہ صحت کا عالمی ادارہ اس سے نمٹنے میں ناکام تھا،’اسی طرح کی فوری اہمیت کینسر کے متعلق بھی چاہیے انہوں نے کہا کہ میری یہ خواہش ہے کہ میں ایسا صدر بنوں جس نے کینسر کا خاتمہ کیا کیونکہ ہمیں یقین ہے کہ اب یہ ممکن ہے،جو بائیڈن نے کہا کہ ’اگر سائنسداں مل جل کر کام کریں تو اس ضمن میں ترقی مزید تیزی سے ہوگی۔

مزید : عالمی منظر