شوکت خانم ہسپتال کا سالانہ افطار ڈنر ، 14کروڑ کے عطیات جمع

شوکت خانم ہسپتال کا سالانہ افطار ڈنر ، 14کروڑ کے عطیات جمع

لاہور(سٹی رپورٹر)ایک صحت مند معاشرے میں تمام افراد ایک دوسرے کے ساتھ دیوار کی ہر اینٹ کی طرح جڑے ہوتے ہیں۔ ایسے معاشرے میں کوئی شخص کسی سے بیگانہ نہیں ہوتا اور تمام افراد ایک دوسرے کے دُکھ سکھ کے ساتھی ہوتے ہیں۔ جسم کے اعضاء کی مانند ایک کی تکلیف سب کی تکلیف ہوتی ہے شوکت خانم میموریل کینسر ہسپتال اینڈ ریسرچ سینٹر پاکستان کے ان روشن اور جگمگاتے ستاروں میں سے ایک ہے جو زکوٰ ۃ اکٹھا کر غریب اور مستحق مریضوں کی مدد کرتا ہے۔گزشتہ روز شوکت خانم میموریل کینسر ہسپتال اینڈ ریسرچ سینٹر میں ہسپتال کے بہی خواہوں اور دوستوں نے فنڈریزنگ کیلئے ایک افطار ڈنر کا اہتمام کیا، جس کے مہمان خصوصی چیئرمین شوکت خانم میموریل ٹرسٹ عمران خان تھے۔ مہمانوں میں شوکت خانم میموریل ٹرسٹ کے ممبران بورڈ آف گورنرزاور دیگر معزز شخصیات سمیت مختلف طبقہ فکر سے تعلق رکھنے والے معززین شہر نے شرکت کی اور دکھی انسانیت کی عظیم خدمت پر شوکت خانم ہسپتال کی خدمات کوسراہا اور اس عزم کا اظہار کیا کہ اللہ کے بندوں کے دکھوں کا مداوا اللہ کے قرب کی اہم ترین راہ ہے ۔ تقریب کا آغاز تلاوت قرآن پاک سے ہوا۔جس کے بعد شہر کے معروف بزنس مین اور لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسری کے سابقہ صدر انجم نثار نے اپنے ساتھیوں اور افطار ڈنر کے میزبانوں شاہد بٹ، یعقوب طاہر اظہار، زاہدالرحمن اور عرفان اقبال شیخ کی جانب سے مہمانوں کو خوش آمدید کہا اور اُن کا اس تقریب میں شرکت کرنے پر شکریہ ادا کیا۔جس کے بعد ہسپتال کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ڈاکٹر فیصل سلطان نے ہسپتال کی گزشتہ سال کی کارکردگی کے بارے میں بتایا۔پشاور کے بارے میں ڈاکٹر فیصل نے خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ شوکت خانم میموریل کینسر ہسپتال اینڈ ریسرچ سینٹرنے پشاور میں اپنی خدمات کا پہلا سال مکمل کرلیا ہے۔ منصوبے کے مطابق، ہسپتال کے آغاز سے کیموتھراپی کی سہولت، اِن پیشنٹ بیڈز، طبی آلات سے لیس آئی سی یو بیڈز، ریڈیالوجی اور پیتھالوجی کی سہولیات فراہم کی جارہی ہیں۔ ہر مہینے ، ہسپتال میں مریضوں کی تعداد میں اضافہ ہورہا ہے۔ سال 2018ء میں ریڈی ایشن اونکالوجی کی خدمات فراہم کرنے کا منصوبہ بنایا گیا ہے، جس کیلئے تعمیر کا کام جاری ہے۔ پشاور کا یہ ہسپتال کینسر کے غریب مریضوں کیلئے بہت سود مند ہے۔ اس موقع پر شوکت خانم میموریل ٹرسٹ کے چیئرمین عمران خان نے شرکاء کا شکریہ ادا کیا اور اپنی تقریر میں کہا کہ یہ صرف پاکستان کے عوام کی بے لوث مدد ہے کہ لوگوں کے علاج کیلئے ہمارا ہر سال کا بجٹ پورا ہوجاتا ہے۔ پاکستان بھر سے کینسر کے مریض علاج کیلئے گزشتہ بائیس سال سے شوکت خانم کینسر ہسپتال کا رخ کرتے ہیں جہاں انہیں بلاامتیاز عالمی معیار کی جدید ترین معالجاتی سہولیات فراہم کی جاتی ہیں۔ اس ضمن میں پاکستان کے شہریوں کا جذبہ خدمت بھی قابل ستائش ہے کہ وہ گزشتہ دو عشروں سے ہسپتال کی بھرپور مدد جاری رکھے ہوئے ہیں، جس کی بدولت ہسپتال اپنے 75فیصد مریضوں کومفت طبی و معالجاتی سہولیات فراہم کرتا ہے اور اس فلاحی کام کیلئے اب تک تقریباً 27ارب روپے خرچ کرچکا ہے۔ ہسپتال کا سال 2017ء کا بجٹ 10 ارب روپے ہے، جس میں سے 5.5 ارب روپے زکوٰۃ و عطیات سے اکٹھے کئے جائیں گے جبکہ باقی رقم ہسپتال اپنی تشخیصی و دیگر خدمات کی آمدنی سے پورا کرے گا۔ ایک اور اہم بات ہسپتال کی کارکردگی ہے،جس کا ایک زمانہ معترف ہے۔ شوکت خانم کینسر ہسپتال کے اکاؤنٹس شفاف ہیں جن کا ہر سال آڈٹ کروایا جاتا ہے اوریہ تمام اکاؤنٹس ہسپتال کی ویب سائٹس پردیکھے جاسکتے ہیں۔ عمران خان نے کہا کہ ہسپتال کو حاصل ہونے والی زکوٰۃ صرف غریب مریضوں کے علاج پر خرچ کی جاتی ہے۔ آخر میں عمران خان نے شرکاء سے خود زکوٰۃ و عطیات وصول کئے۔معززین شہر نے اس نیک کام کیلئے بہت فراخدلی کا مظاہرہ کیا اور چند ہی گھنٹوں میں 14کروڑ روپے کے عطیات و زکوٰۃ اکٹھی ہوگئی۔تقریب کیلئے کمپیئرنگ کے فرائض مشہور آرٹسٹ عائشہ ثناء نے انجام دیے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1