وزیر اعظم کے زیر صدارت قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس، افغانستان کے الزامات مسترد ، ہر قسم کی جارحیت کا منہ توڑ جواب دینگے : پاکستان

وزیر اعظم کے زیر صدارت قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس، افغانستان کے الزامات ...

اسلام آباد(اے این این) وزیر اعظم نواز شریف کی صدارت میں قومی سلامتی کمیٹی کے اجلاس میں سیاسی و عسکری قیادت نے دہشتگردی کے حوالے سے پاکستا ن اور ایجنسیوں کیخلاف الزامات کو یکسر مسترد کرتے ہوئے اس عزم کا اظہار کیا گیا ہے کہ ملکی سلامتی اور خود مختاری پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جا ئے گا،ملک کیخلاف کوئی سازش کامیاب نہیں ہونے دی جائے گی ،ہر قسم کی جارحیت کا منہ توڑ جواب دیا جائے گا،پر امن اور مستحکم افغانستان کیلئے کردار جاری رکھیں گے۔ وزیر اعظم ہاؤس میں گزشتہ روز قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس ہوا۔وزیر اعظم نواز شریف کی صدارت میں ہونے والے اجلاس میں وزیر دفاع خواجہ آصف ، وزیر خزانہ اسحاق ڈار اور وزیر داخلہ چودھری نثار علی خان ، قومی سلامتی کے مشیر ناصر جنجوعہ اور مشیر خارجہ سرتاج عزیز ، چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی اور آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سمیت تینوں مسلح افواج کے سربراہان ، ڈی جی آئی ایس آئی میجر جنرل نوید مختار نے بھی شرکت کی ۔ اجلاس کے دوران آپریشن ردالفساد سمیت ملک میں امن و امان کی مجموعی صورتحال پر بھی غور کیا گیا ۔ اجلاس کے دوران بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو کے حوالے سے بھی معاملات زیر بحث آئے ۔ اجلاس میں خفیہ معلومات کی بنا پر کئے جانے والے آپریشنز کی کامیابی کا بھی جائزہ لیا گیا ۔اجلاس میں قومی سلامتی کمیٹی افغانستان کی طرف سے ملک میں امن و امان کی صورتحال پیدا کرنے سے متعلق پاکستان اور اس کی ایجنسیوں پر لگائے گئے الزامات کویکسر مسترد کردیا اور اس عزم کا اظہار کیا کہ پاکستان دشمن قوتوں کی تمام سازشوں اور جارحیت کے خلاف اپنا بھرپور دفاع کیا جائے گا۔اجلاس میں کہاگیا کہ پاکستان نہ صرف پرامن اورمستحکم افغانستان کیلئے پرعزم ہے بلکہ وہ اس مقصد کیلئے تمام علاقائی اور عالمی اقدامات میں شامل ہے۔

پاکستان

مزید : صفحہ اول