امسال معدنیات کے شعبہ میں صوبائی خزانہ میں 74 کروڑ روپے جمع

امسال معدنیات کے شعبہ میں صوبائی خزانہ میں 74 کروڑ روپے جمع

  

پشاور( کرائمز رپورٹر )امسال معدنیات کے شعبے سے صوبائی خزانے میں تقریباً74کروڑ روپے کے محاصل جمع کئے گئے ہیں جبکہ موجودہ صوبائی حکومت کے موثر اقدامات کی بدولت اس اہم شعبے سے اس سے زیادہ ریونیو حاصل کرنے کی توقع ہے۔ محکمہ خزانہ نے مالی سال2017-18میں محکمہ معدنیات کو2.4بلین روپے کے محاصل کا ٹارگٹ دیا ہے۔محکمہ ہذا نے نومبر2016سے آن لائن درخواستوں کی وصولی کا سلسلہ بھی شروع کر رکھا ہے۔ سال2017-18کی بجٹ دستاویزات کے مطابق صوبائی حکومت جدید ٹیکنالوجی اور علوم کو بروئے کار لا کر صوبے کی قیمتی دولت معدنیات کی دریافت ،پیداوار،مارکیٹنگ اور استعمال کے بارے میں متعدد منصوبہ جات پر کام کر رہی ہے جبکہ فرسودہ قوانین کا خاتمہ کر کے معدنیات کے شعبے میں نمایاں اصلاحات لائی گئی ہیں۔ معدنی شعبے کی ترقی و ترویج کے لئے منرل سیکٹر گورننس ایکٹ2016کا نفاذ عمل میں لایا گیا ہے جبکہ دیگر اقدامات میں معدنی لائسنس کے حصول کے لئے آن لائن مینجمنٹ سسٹم اور متعلقہ سافٹ اپلیکیشن کا استعمال شامل ہے مزید برآں ایک مکمل Mining Cadastral Systemکے قیام پر بھی کام ہو رہا ہے اور ڈائریکٹوریٹ جنرل مائنز اینڈ منرلز میں Monitoring & Evaluation systemکے تحت غیر قانونی معدنی کھدائی،پیداوار کی صحیح رپورٹنگ، موجودہ نظام میں خامیوں پر قابو پاکر شفافیت، قانون کی حکمرانی اور علاقائی سطح پر انصاف کی فراہمی کو یقینی بنانے کا نظام بھی وضع کیا گیا ہے جو کہ پچھلے سال کے برعکس نمایاں اقدامات ہیں اس طرح صوبائی حکومت نے کم از کم اجرت میں بھی مناسب اضافہ کیاہے اور نئے بجٹ کے تحت کم از کم اجرت کو14ہزار سے بڑھا کر15ہزار روپے ماہانہ کر دیا ہے

مزید :

کراچی صفحہ اول -