کروڑ لعل عیسن‘ نجی ٹارچر سیل میں شہریوں پر وحشیانہ تشدد‘ حکام بے بس

کروڑ لعل عیسن‘ نجی ٹارچر سیل میں شہریوں پر وحشیانہ تشدد‘ حکام بے بس

کروڑ لعل عیسن(نمائندہ پاکستان) کروڑ کی نواحی بستی لسکانیوالا کے محمدرفیق نے تھانہ کے اندر میڈیا کے نمائندوں کو بتایا کہ تین روز قبل منیر احمد جوکہ سعودی عرب کام کرتا ہے ملنے کیلئے آیا جونہی منیر احمد میرے پاس پہنچاتو مجید نیازی کابھائی ،بیٹا ،ملک ابراربھمب دیگر درجنوں افرادآگئے اورکہاکہ منیر احمد کو ہمارے حوالے کردو میں نے پولیس کو واقعہ کی اطلاع دی لیکن حسب روایت پولیس موقعہ پر نہ پہنچی(بقیہ نمبر38صفحہ12پر )

میرے انکار پر تمام افراد نے چادر چاردیواری کاتقدس پامال کیااور دیوار اور مکان پر چڑھ گئے دھمکیاں دیں خوف کی وجہ سے منیر احمد کو تین روز قبل مجید نیازی کے آدمیوں کے حوالے کیا ایس ایچ او سرفرازگاڈی نے بتایا کہ ایم پی اے کے آدمی منیر احمد کو تھانہ میں چھوڑ گئے جس کی تشددسے آنکھیں سرخ اور جسم پر نیل پائے گئے اور جسم پر تشدد کے نشانات بھی ہیں تشدد سے پاؤں اور ٹانگوں پر سوزش پائی گئی واقعہ کی تفتیش جاری ہے شہریوں نے ڈی پی او لیہ سے مطالبہ کیا کہ واقعہ کی تفتیش کسی دیانتدار تفتیشی آفیسر سے کرائی جائے جب اس حوالے سے ایم پی اے سے رابطہ کیا گیا تو ان کا نمبر بند ملا جس کے بعد ایم پی اے کے پرسنل سیکرٹری ملک ابرار بھمب سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے کہا کہ منیر احمد نے علم پاک کی توہین پر لسکانیوالا میں لوگ تشدد کررہے تھے ہم نے منیر احمد کی لوگوں سے جان بچائی اور پولیس کے حوالے کیا الزامات بے بنیاد ہیں ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...