بھائیوں پر فائرنگ کا واقعہ ،وزیرداخلہ سندھ نے نوٹس لے لیا

بھائیوں پر فائرنگ کا واقعہ ،وزیرداخلہ سندھ نے نوٹس لے لیا

کراچی(کرائم رپورٹر)کراچی کے علاقے جناح اسپتال کے قریب موبائل فون چھیننے کی کوشش میں مزاحمت پر ڈاکوؤں کی فائرنگ سے زیر تربیت ڈاکٹر اور اس کا بھائی زخمی ہوگئے ہیں۔ایک بھائی کی حالت تشویشناک بناتی جاتی ہے ۔ وزیرداخلہ سندھ سہیل انور سیال نے واقعے کانوٹس لیتے ہوئے تحقیقات کاحکم دے دیاہے۔تفصیلات کے مطابق جناح اسپتال کے قریب موٹرسائیکل سواردو مسلح ملزمان کی فائرنگ سے دو سگے بھائی زخمی ہوگئے، ملزمان نے مذکورہ افراد کو جناح اسپتال سے صدر آنے والے پل پر فائرنگ کرکے زخمی کیا۔واقعے کے بعد جناح اسپتال کے مین روڈ پر ٹریفک جام ہوگیا، پولیس کے مطابق ملزمان نے دونوں افراد کو چار گولیاں ماریں، جائے وقوعہ سے نائن ایم ایم کے خول ملے ہیں۔ایس پی صدر توقیر کے مطابق واقعے کی ہرزاویئے سے جانچ پڑتال کی جارہی ہے۔ ایس پی صدر کے مطابق پل کے اوپر سے ایک خول اور چلی ہوئی گولی کاسکہ ملا ہے۔اس کے علاوہ دو مختلف مقامات سے دو چپلوں کی جوڑیاں بھی ملی ہیں، انہوں نے بتایا کہ ایک شرٹ کا ٹکڑا ملا ہے، لگتا ہے کہ واردات کے موقع پر مزاحمت بھی ہوئی، مزید شواہد اکٹھے کیے جا رہے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ ابتدائی رپورٹ کے مطابق واقعہ ڈکیتی مزاحمت کالگتاہے تاہم مزید تحقیقات جاری ہیں۔ جناح اسپتال کی جوائنٹ ڈائریکٹر ڈاکٹر سیمی جمالی کے مطابق سندھ میڈیکل یونیورسٹی کا طالب علم عامر امیر شیخ گھر سے بھائی یاسین کے ہمراہ یونیورسٹی پہنچا تو مین روڈ پر دو ملزمان نے مبینہ طور پر ان سے موبائل فون چھیننے کی کوشش کی۔اس دوران ایک بھائی نے مزاحمت کی تو ملزمان نے فائرنگ کردی جس سے دونوں بھائی شدید زخمی ہوگئے۔دونوں کو جناح اسپتال کی ایمرجنسی پہنچایا گیا جہاں ایک کی حالت تشویشناک ہے۔ ڈاکٹر سیمی جمالی کے مطابق زخمیوں کی جان بچانے کی کوشش کی جارہی ہے۔علاوہ ازیں صوبائی وزیرداخلہ سہیل انورسیال نے واقعے کانوٹس لیتے ہوئے ایڈیشنل آئی جی کراچی کو تحقیقات کاحکم دے دیا ہے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر