علاقہ پچھادھ میں خشک سالی، پانی نایاب شدید پیاس سے 1نوجوان جاں بحق

علاقہ پچھادھ میں خشک سالی، پانی نایاب شدید پیاس سے 1نوجوان جاں بحق

جام پور (نامہ نگار) علاقہ پچادھ میں قحط سالی‘ بارشیں نہ ہو نے سے لوگ پانی کو ترس گئے ۔ شدید پیاس کی وجہ سے پانی نہ ملنے پر ڈپٹی سپیکر پنجاب اسمبلی کے آبائی گاؤں کے نزدیک پچیس سالہ نوجوان ہلاک۔ لنڈی سیدان‘ درگڑی‘ بولہی‘ غلابی‘ گیڑوں واہ‘ گولے واہ سمیت دیگر علاقوں میں پینے (بقیہ نمبر48صفحہ12پر )

کا پانی نایاب۔اگربارشیں ایک ہفتہ تک نہ ہوئیں تو لوگ مر جائیں گے۔ علاقہ پچادھ میں بارشیں نہ ہونے سے پانی کے بنائے جانے والے تالاب خشک ہو گئے اور سابق صدر فاروق احمد لغاری کے دور میں عوام کو پانی فراہم کرنے کے لیے بنائی جانے والی پبلک ہیلتھ سکیمیں مکمل دیکھ بھال نہ ہونے کی وجہ تباہ ہو چکی۔ گزشتہ دنوں لنڈی سیدان سے ایک کلومیٹر کے فاصلہ پر رہاگشی پچیس سالہ ظہور احمد نامی نوجوان شدید پیاس کی وجہ ہلاک ہو گیا جس کی لاش ڈپٹی سپیکر پنجاب اسمبلی کے آبائی گاوں لعل گڑھ کے نزدیک پائی گئی ۔ سروے کے مطابق اس وقت بولہی‘ درگڑی‘ دربار نظام شاہ‘ برکتو‘ غلابی‘ گولے واہ‘ الہی واہ‘ گیڑو لشاری سمیت دیگر علاقوں میں پانی کی شدید قلت ہے ۔ لوگ پانی نہ ملنے سے مر رہے ہیں ان علاقوں کے لوگ گدھوں اور گھوڑوں اور ٹریکٹر ٹرالیوں و موٹرسائیکلوں پر پانی بھر نے کے لیے بیس کلومیٹر کو فاصلہ لنڈی سیدان تک کو طے کرکے پانی بھر کے واپس ہو تے ہیں۔سابق دفعدار نصراللہ خان سہرانی‘ سردار امان للہ خان لشاری‘ احمد نواز خان‘ شاہنواز خان‘ مختیار خان اور دیگر نے کہا کہ گورچانی سرداروں نے اپنے دور اقتدار میں ان علاقوں کو نظر اندازکیے رکھا۔ اطلاعات کے مطابق محکمہ کی ملی بھگت سے فنڈز نکلوا کرکے ہضم کر لیے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کئی بار ڈپٹی کمشنر راجن پور کو بھی اس مسلہ کی طرف توجہ مبذول کرائی گئی ہے لیکن کوئی عمل نہ ہوا ۔انہوں نے کہا کہ اگر ایک ہفتہ تک بارشیں نہ ہو ئیں تو مزید ہلاکتوں کا خطر ہ ہے۔ انہوں نے نگران وزیر اعظم‘ وزیر اعلی پنجاب‘ کمشنر ڈیرہ‘ ڈپٹی کمشنر راجن پور چوہدری اشفاق چوہدری سے مطالبہ کیا ہے کہ فوری طور پر ان علاقوں میں پانی کی فراہمی کی جائے ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...