چور نے 100سالہ خاتون کی گردن توڑ دی، اپنی آخری سانسوں کے دوران جاتے جاتے وہ اس چور کے لیے کیا کام کر گئی؟ جان کر چوری کرنے والا خود ہی شرم سے پانی پانی ہو جائے

چور نے 100سالہ خاتون کی گردن توڑ دی، اپنی آخری سانسوں کے دوران جاتے جاتے وہ اس ...
چور نے 100سالہ خاتون کی گردن توڑ دی، اپنی آخری سانسوں کے دوران جاتے جاتے وہ اس چور کے لیے کیا کام کر گئی؟ جان کر چوری کرنے والا خود ہی شرم سے پانی پانی ہو جائے

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) نازی جرمنی میں ہٹلر کے ’موت کے کیمپ‘ سے زندہ بچ جانے والی خاتون گزشتہ دنوں100سال کی عمر میں ڈکیتی مزاحمت پر قتل ہو گئی اور اپنے آخری وقت میں اس کی زبان پر کیا الفاظ تھے؟ سن کر آپ اس خاتون کی عظمت کے معترف ہو جائیں گے۔ میل آن لائن کے مطابق یہ واقعہ برطانیہ کے شہر ڈربی میں پیش آیا جہاں زوفیجا کیزن نامی یہ خاتون ریٹائرمنٹ کے بعد رہائش پذیر تھی۔ وہ اپنے گھر سے چرچ جا رہی تھی کہ راستے میں ایک بدطینت نے اس پر حملہ کر دیا جس میں اس کی گردن کی ہڈی ٹوٹ گئی اور 9دن ہسپتال میں رہنے کے بعد گزشتہ روز زوفیجا چل بسی۔ اپنے آخری وقت میں وہ بسترمرگ پر پڑی اپنے قاتل کے لیے مسلسل دعا کرتی رہی کہ خدا اسے معاف کرے۔

رپورٹ کے مطابق زوفیجا کو گلی میں بے سدھ پڑے اس کی 80سالہ دوست انیا سکریتک نے دیکھا اور ایمبولینس کو کال کی۔ اس کے انتقال پر انیا سکریتک کا کہنا تھا کہ ’’زوفیچا بہت ملنسار، منکسرالمزاج اور خوش مزاج خاتون تھی۔ کمیونٹی میں اس کو قدر کی نگاہ سے دیکھا جاتا تھا۔ کسی نے اس کا بیگ چھیننے کی کوشش میں اس کی جان لے لی۔‘‘ پولیس کی طرف سے بتایا گیا ہے کہ انہوں نے زوفیجا کے قتل کے شبے میں ایک 39سالہ شخص کو گرفتار کر لیا ہے۔‘‘ واضح رہے کہ زوفیجا پولینڈ میں پیدا ہوئی تھی اور وہ پولینڈ پر جرمنی کی نازی فوج کے قبضے تک اپنے قصبے بروڈی میں پلی بڑھی۔ ہٹلر کی افواج نے اس کے چھوٹے بھائی کو قتل کر دیا تھا اور اسے پولینڈ کے دیگر شہریوں کی طرح ’ڈیتھ کیمپ‘ میں لا کر قید کر دیا جہاں اس سے جبری مشقت کروائی جاتی تھی۔ جب جنگ ختم ہوئی تو زوفیجا اپنے شوہر میکولجا کے ہمراہ فرار ہو کر برطانیہ آ گئی۔ اس کے شوہر میکولجا کا انتقال 2009ء میں ہو گیا تھا۔

مزید : ڈیلی بائیٹس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...