سابق دور کی کاسمیٹکس پالیسیوں نے معیشت کی بنیادیں تک ہلا دیں، ہمایوں اختر

سابق دور کی کاسمیٹکس پالیسیوں نے معیشت کی بنیادیں تک ہلا دیں، ہمایوں اختر

  



لاہور(نمائندہ خصوصی) تحریک انصاف کے سینئر مرکزی رہنما ہمایوں اختر خان نے کہا ہے کہ معیشت کو ترقی دینے کی دعویدار مسلم لیگ (ن) مسائل کے انبار چھوڑ کر گئی ہے ،سابقہ دور کی کاسمیٹکس پالیسیوں نے ملک او رمعیشت کی بنیادیں تک ہلا دی ہیں،اس وقت پاکستان میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں خطے کے دیگر ممالک کے مقابلے میں کم ہیں اور اگر انہیں بھارت کی سطح پرلایا جائے توحکومت کو 600ارب روپے کی آمدن حاصل ہو سکتی ہے۔ اپنے دفتر میں ملاقات کیلئے آنے والے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے ہمایوں اختر خان نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان کا واضح موقف ہے کہ چاہے کوئی بھی قیمت ادا کرنی پڑے میرٹ اور شفافیت کو پس پشت نہیں ڈالنے دیا جائے گا اور یہی وجہ ہے کہ ایک وفاقی وزیر کی مداخلت پر سختی سے ایکشن لیا گیا ہے۔

جب تک میرٹ اور شفافیت کا بول بالا نہیں ہوگا پاکستان آگے نہیں بڑھ سکتا۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان ڈلیور کرنا چاہتے ہیں اور اس کیلئے وہ دن رات کام کر رہے ہیں۔آئین و قانون کے مطابق وزیر اعظم مختلف شعبوں کے ماہرین کو اپنی ٹیم کا حصہ بناسکتے ہیں اور سابقہ ادوار میں بھی اس کی مثالیں موجود ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ترقی کی دعویدار مسلم لیگ (ن) نے معیشت کے ساتھ جو کھلواڑ کیا ہے اس نے ملک کی بنیادیں تک ہلا دی ہیں لیکن یہ لوگ پھر بھی اپنی غلطی تسلیم کرنے کو تیار نہیں۔ جب موجودہ حکومت آئی تو اکاؤنٹ خسارہ 19ارب ڈالر کی ریکارڈ سطح پر تھا،اسی طرح توانائی کے شعبے میں اربوں روپے کا سرکلر ڈیٹ بھی معیشت پر بوجھ بنا ہوا ہے۔ہم نے سابقہ حکمرانوں کی طرح مسائل کو دیکھ کر آنکھیں بند کرنے کی بجائے حالات کا دلیری سے مقابلہ کیا ہے اور بڑی حد تک مسائل پر قابو پایا ہے۔ حکومت نے اعلان کیا ہے ہم 2021ء تک اربوں روپے کے سرکلر ڈیٹ کو صفر پر لے کر آئیں گے اورکیا یہ معمولی چیلنج ہے۔ انہوں نے کہا کہ سابقہ حکومت نے مہنگی بجلی کی پیداوار کی جس کی وجہ سے صارفین کیلئے اسے خریدنا مشکل ہے، ہم سستی توانائی کے حصول کیلئے کوششیں کر رہے ہیں۔ ہمایوں اختر خان نے کہا کہ مشکل حالات کے باوجود حکومت کاروبار دوست بجٹ پیش کرے گی اور عوام کو بھی ریلیف میسر آئے گا۔ حکومت نے پیٹرولیم پر کوئی نیا ٹیکس عائد نہیں کیا بلکہ وہی ٹیکسز ہیں جو پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) اپنے ادوار میں بھی وصول کر رہی تھی۔ پاکستان میں پیٹرولیم کی قیمتیں اب بھی خطے کے دیگر ممالک کے مقابلے میں کم ہیں اور اگرحکومت ان قیمتوں کو بھارت کی سطح پر لائے توصرف اس سے 600ارب روپے کی آمدنی ہو سکتی ہے

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...