محمد بن قاسم سندھ کیوں آیا تھا؟

محمد بن قاسم سندھ کیوں آیا تھا؟
محمد بن قاسم سندھ کیوں آیا تھا؟

  

کچھ لوگ چاہتے ہیں کہ محمد بن قاسم کو ”گھس بیٹھیا“ اور راجا(عموماً راجہ لکھا جاتا ہے جو اردو قواعد کے لحاظ سے غلط ہے)قومی ہیرو کا درجہ دیا جائے۔اس مقصد کے لیے مختلف سطح پر ان کی کوششیں جاری رہی ہیں۔ اسی سلسلے کی تازہ کڑی حالیہ دنوں میں ایک بار پھر سامنے آئی ہے جب اس مذموم مقصد کے لیے اہل بیت کا نام استعمال کر کے کہا گیا کہ محمد بن قاسم سندھ میں اسلام کی خدمت کرنے نہیں آیا تھا بلکہ ان اہل بیت کو واپس لینے آیا تھا جو بنو امیّہ کے ظلم و ستم سے تنگ آ کر ہجرت کر کے سند میں آگئے تھے اور راجا داہر نے انہیں پناہ دی ہوئی تھی۔ ایسے کو تیسا کے تحت پہلا سوال یہ بنتا ہے کہ جس نے محمد بن قاسم کو سندھ بھیجا تھاچلو وہ تو اہل بیت کا دشمن تھا لیکن اس کے معزول ہونے کے بعد جس نے محمد بن قاسم کو بیڑیوں میں جکڑ کر قید خانے میں پابند سلاسل کیااور موت کا ایندھن بنایا کیا وہ اہل بیت کا ہمدرد تھااور کیا اس کا تعلق بنو امیّہ سے نہیں تھا؟

تاریخ کی تمام کتابوں میں محمد بن قاسم کے آنے کی وجوہات لکھی ہوئی ہیں لیکن مرزا جہلمی نے کہا کہ وہ بھی تاریخ ہے اور جو میں نے کہا وہ بھی تاریخ ہے اور اس طرح وہ اپنی بات پر آج تک اڑے ہوئے ہیں۔ ان کی اور ان کے متبعین کی خدمت میں عرض ہے کہ تاریخ صرف بیان نہیں کی جاتی ہے بلکہ اسے تحقیقی اصولوں کی کسوٹی پر پرکھا جاتا ہے اور پھر فیصلہ کیا جاتا ہے کہ آیا یہ بات صحیح ہے یا غلط؟محمد بن قاسم پر لگائے گئے اس الزام کے تین بنیادی اہم پہلو ہیں اورتحقیق کے بعد ماننا پڑتا ہے کہ یہ محض سفید جھوٹ ہے۔ پہلا پہلو اہل بیت اطہارکا، دوسرا پہلو محمد بن قاسم یا فتح سندھ جبکہ تیسرا پہلو راجا داہر کا ہے۔کالم کی تنگ دامنی تینوں پہلوؤں پر فرداً فرداً بحث کی اجازت نہیں دیتی۔ اس لیے مختصر تذکرہ کیا جائے گا لیکن بات ان شاء اللہ (عموماً انشاء اللہ لکھا جاتا ہے جو بالکل غلط ہے)واضح ہو جائے گی۔

فتح سندھ ترانوے ہجری (۳۹ھ) کا واقعہ ہے اور یہی سال راجا داہر کی موت کا بھی ہے۔حضرت علیؓ کی شہات 40 ہجری میں ہے، امام حسنؓ کی شہادت 50 ہجری ہے اور امام حسینؓ کربلا کے تاریخی معرکے میں 61ہجری میں شہید ہوئے۔لہذا ان حضرات کے تو سندھ میں راجا داہر کے ہاں پناہ لینے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔مرزا اور ان کے ہمنواجب یہ کہتے ہیں کہ اہل بیت نے ہجرت بنوامیّہ کے ظلم و ستم سے تنگ آ کر کی تھی تو وہ اپنی بات کو 41ہجری کے ساتھ مقیّد کر دیتے ہیں کیونکہ سلطنت اموی کی بنیاد حضرت امیر معاویہ نے 41ہجری میں ہی رکھی تھی۔اسی طرح جب وہ یہ کہتے ہیں کہ محمد بن قاسم انہیں پناہ گزین اہل بیت کو واپس لینے آیا تھا تو بھی ان کی بات 95ہجری کے ساتھ مقیّد ہو جاتی ہے کیونکہ اس کے بعد تو محمد بن قاسم زندہ ہی نہیں تھا۔اہل بیت کی ہجرت کو بنوامیّہ اور محمد بن قاسم کے ساتھ مختص کرنے کا مطلب یہ ہے کہ اہل بیت نے ہجرت 41ہجری اور95ہجری کے درمیان کی۔یعنی جو کچھ ہوا انہی 54سالوں میں ہوالیکن جب اس بات کو تحقیق کی کسوٹی پر پرکھا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ یہ ایک شرلی ہے جسے اہل بیت کے مقدس نام کی آڑمیں راجا داہر کوہیروبنانے کے لیے چھوڑا گیا ہے۔

امام حسنؓ اور امام حسینؓ کی اولاد کو اہل بیت کہاجاتا ہے۔علامہ شبلنجی کا کہنا ہے کہ امام حسنؓ کے تین فرزند عبداللہ، قاسم اور عمر میدان کربلا میں شہید ہو گئے تھے۔نورالابصار اور ارشاد مفید کے مطابق آپ کے کل آٹھ بیٹے اور سات بیٹیاں تھیں۔مطالب السؤل کے مطابق آپ کی نسل صرف حضرت زید اور حضرت حسن المثنّیٰ سے آگے چلی۔ امام حسن المثنّیٰ کی وفات 97ہجری اور حضرت زید کی وفات 120 ہجری میں ہوئی اورتدفین مدینہ منوّرہ میں ہوئی۔یعنی ان دونوں کی وفات محمد بن قاسم کے شہادت کے بعد ہوئی اوران کے بارے میں کہیں بھی کوئی روایت موجود نہیں ہے کہ انہوں نے سندھ کی طرف ہجرت کی ہو۔

امام حسین ؓمیدان کربلا میں حضرت علی اکبر اور علی اصغر کے ہمراہ شہید ہو گئے تھے۔ان کی اولاد میں سے سوائے امام زین العابدین کے کوئی زندہ باقی نہیں بچا تھاجو 95 ہجری میں مدینہ منوّرہ میں ہی خالق حقیقی سے ملے اور وہیں ان کا مرقد ہے۔لہذا معلوم ہوا کہ امام حسنؓ اور امام حسینؓ کی اولاد میں سے کسی فرد نے سندھ کی ہجرت نہیں کی۔اب آ جاتے ہیں امام زین العابدین کی اولاد کی طرف، شیخ مفید اور علامہ سیوطی کے ہاں انہوں نے گیارہ لڑکے اور چار لڑکیاں چھوڑیں۔یہاں بھی سوال یہی ہے کہ امام زین العابدین نے جب 95ہجری تک خود سندھ کی طرف ہجرت نہیں کی بلکہ اپنے آباؤاجدادکی طرح ڈٹ کر مظالم کا مقابلہ کیا تو کیسے ممکن ہے کہ ان کی اولاد سنت حسینی کو بھول گئی ہویا انہوں نے مظالم میں باپ کا ساتھ دینے کی بجائے سندھ کی طرف راہ فرار اختیار کر لی ہو؟آپ کے صاحبزادے حضرت زیدباختلاف روایات 125 ہجری میں کوفہ میں میدان جنگ میں شہید ہوئے جبکہ امام باقر کی شہادت 114 ہجری میں ہوئی۔

غرضیکہ کہ بنوامیّہ کی امارت یعنی 41ہجری سے محمد بن قاسم کی شہادت یعنی 95ہجری تک اہل بیت کے سب افراد عرب علاقوں بالخصوص حجاز مقدس میں ہی موجود تھے۔41ہجری سے پہلے کسی کی ہجرت کا دعویٰ کرنااس لیے بھی مشکل ہے کیونکہ مخالفین کا دعویٰ باطل ہو جاتا ہے اور 95ہجری کے بعد بھی ہجرت کا دعویٰ فضول ہے کیونکہ اس سال محمد بن قاسم شہید ہو چکاتھا تو شہادت کے بعد وہ کیسے اورکسے واپس لینے سندھ آیا تھا؟معلوم ہوتا ہے کہ اس ”شرلی“ کا مقصد راجا داہر کو ہیرو بناناتھا ورنہ محمد بن قاسم کا نام نہ لیا جاتا لیکن جب بندہ نفرت میں اندھا ہو تو وہ اسی طرح کی غلطیاں کرتا ہے جس سے اس کی ”تحقیق کا غبارہ“ خودبخود ہی پھٹ جاتا ہے۔

یاد رہے کہ حضرت عمر بن عبدالعزیز 87ہجری سے لے کرتقریباً 92ہجری تک حجاز کے گورنر رہے جبکہ 99ہجری سے 101ہجری تک وہ خلیفہ بنے۔اہل بیت کے گھرانے بھی حجازمقدس میں ہی تھے۔ عمر بن عبدالعزیز کے بارے میں کوئی بھی نہیں کہہ سکتا کہ وہ اہل بیت پر ظلم کرتے ہوں۔اسی طرح یہ بھی محال ہے کہ حجاز کے باہر یا اندر سے اہل بیت کے کسی فرد نے ان کے ہاں پناہ لینے کی بجائے راجا داہر جیسے فاسق کے ہاں پناہ لی ہو۔ آخر میں ایک نقد سوال کہ امام حسنؓ، امام حسینؓ اور کربلا میں ان کے شہید ہو جانے والے صاحبزادوں کے نام تو سب کو معلوم ہیں۔

محمد بن قاسم کی شہادت 95ہجری تک جتنے بھی اہل بیت زندہ تھے وہ کوئی گمنام فرد نہیں تھے بلکہ امام حسنؓ اور امام حسینؓ کی اولاد یا ان کے پوتے تھے جن کے نام اور حالات سے آگاہی کتب رجال و سیر میں دستیاب ہے، ان میں کسی ایک کی بھی سندھ کی طرف ہجرت کی کوئی ایک روایت موجود ہو تو کم از کم مجھے لازمی دکھائیے تا کہ علم میں اضافہ ہو۔اگر ایسا ممکن نہ ہو تو سرعام دھڑلے سے راجا داہر کو اپنا مرشد بنانے کا اعلان کریں لیکن خدارا! اس مقصد کے لیے اہل بیت کے نام پر سیاست نہ کریں۔

مزید :

رائے -کالم -