بینکٰنگ ٹرانزیکشنز پر ود ہولڈنگ ٹیکس کی مجموعی وصولی میں 35فیصد کمی

      بینکٰنگ ٹرانزیکشنز پر ود ہولڈنگ ٹیکس کی مجموعی وصولی میں 35فیصد کمی

  

اسلام آباد۔ 7 جون (اے پی پی) رواں مالی سال کے دوران نان کیش بینکٰنگ ٹرانزیکشنز پر وود ہولڈنگ ٹیکس کی مجموعی وصولی میں 35فیصد کمی ہوئی ہے۔ سٹیٹ یینک آف پاکستان (ایس بی پی) کے مطابق جاری مالی سال کے ابتدائی گیارہ مہینوں میں جولائی تا مئی 2019-20ء کے دوران نان کیش بینکنگ ٹرانزیکشنز پر وود ہولڈنگ ٹیکس محصولات 6.93ارب روپے تک کم ہوگئے جبکہ گذشتہ مالی سال میں جولائی تا مئی 2018-19ء کے دوران اس مد میں 10.677ارب روپے ٹیکس وصولیاں ہوئی تھیں۔ اس طرح گذشتہ مالی سال کے مقابلہ میں رواں مالی سال کے دوران نان کیش بینکنگ ٹرانزیکشنز پروود ہولڈنگ ٹیکس محصولات میں 3.747ارب روپے یعنی 35فیصد کمی ریکارڈ کی گئی ہے۔ کووڈ19-کے باعث لاک ڈاؤن سمیت دیگر مختلف عوامل سمیت معیشت کو دستاویزی شکل دینے کے اقدامات بھی وود ہولڈنگ ٹیکس وصولی میں کمی کے اسباب میں شامل ہیں کیونکہ ایکٹوٹیکس دہندگان کی فہرست میں نام نہ رکھنے والے افراد نان کیش ٹرانزیکشنز پر 0.6وود ہولڈنگ ٹیکس کی ادائیگی کے پابند ہیں۔ ٹیکس گوشوارے جمع کرانے اور ٹیکس کے دائرہ کار میں لاکھوں نئے افراد کی شمولیت ووڈ ہولڈنگ ٹیکس میں کمی کا سبب ہے۔ ایس بی پی کے مطابق مارچ کے مقابلہ میں اپریل 2020ء کے دوران بینکنگ سسٹم کے مجموعی ڈیپازٹس میں 0.651کھرب روپے کمی ہوئی ہے اور اپریل 2020ء کے دوران مجموعی ڈیپازٹس ک مالیت 14.475کھرب روپے تک کم ہوگئی جبکہ اپریل 2020ء کے اختتام پر بینکنگ سسٹم کے مجموعی ڈیپازٹس کا حجم 15.126کھرب روپے ریکارڈ کیا گیا تھا۔

مزید :

کامرس -