ٹرائبل سٹوڈنٹس فیڈریشن کا آن لائن کلاسزلینے کے پروگرام سے بائیکاٹ کا اعلان

  ٹرائبل سٹوڈنٹس فیڈریشن کا آن لائن کلاسزلینے کے پروگرام سے بائیکاٹ کا اعلان

  

ہنگو (بیورو رپورٹ) ٹرائبل سٹوڈنٹس فیڈریشن کا قبائلی اضلاع میں نیٹ سسٹم نہ ہونے کی وجہ سے آن لائن کلاسزلینے کے پروگرام سے بائیکاٹ کا اعلان حکومت ایس او پیز کے تحت قبائلی اضلاع کے طلباء کیلئے یونیورسٹیاں کھلے یا نیٹ سسٹم مہیا کریں یا متبادل طریقہ بتائیں کیونکہ تمام قبائلی اضلاع اور خاص کر ضلع اورکزئی میں نیٹ سسٹم اور تھری جی فور جی سروس نہ ہونے کی وجہ سے طلباء آن لائن کلاسز لینے سے محروم ہیں ان کا تعلیمی سال ضائع ہو رہا ہے اور مستقبل تاریکی کی طرف رواں دواں ہے اگر حکومت نے ہمارے مطالبات نہیں مانے تو ہم ملک گیر سطح پر احتجاج کا سلسلہ شروع کریں گے ان خیالات کا اظہار ٹرائبل سٹوڈنٹس فیڈریشن کے مرکزی جنرل سیکرٹری آصف علی محمد لقمان اورکزئی حیات علی سید قائم علی شاہ اور سید نبیل حسین نے دیگر ساتھیوں کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس کے خلاف لاک ڈاؤن کی وجہ سے گزشتہ کئی ماہ سے تعلیمی ادارے بند ہیں پھر حکومت نے طلباء کا مستقبل محفوظ بنانے کیلئے آن لائن کلاسز لینے کا منصوبہ شروع کیا جو کہ ایک اچھا اقدام ہے مگر ہنگو کے ارد گرد دیہات سمیت قبائلی ضلع اورکزئی اور تمام قبائلی اضلاع میں یونیورسٹیوں کے طلباء اس سہولت سے محروم ہیں کیونکہ یہاں پر نہ نیٹ سسٹم ہے اور نہ تھری جی فور جی سروس جس کے باعث قبائلی اضلاع کے طلباء آن لائن کلاسز لینے سے قاصر ہیں ان کا تعلیمی سال ضائع ہو رہا ہے اور مستقبل تاریکی میں ڈوب رہا ہے پریس کانفرنس کے دوران انہوں نے کہا کہ حکومت ہمارے لئے نیٹ سسٹم اور تھری جی فور جی سروس مہیا کرے یا ایس او پیز کے تحت قبائلی اضلاع بشمول جن اضلاع میں نیٹ سسٹم کام نہیں کرتا وہاں کے طلباء کیلئے یونیورسٹیاں کھل دی جائیں یا ہم کو متبادل طریقہ بتائیں تاکہ ہمارا مستقبل محفوظ ہو جائے اور تعلیمی سال ضائع ہونے سے بچ جائے انہوں نے کہا کہ ہم حکومت کی طرف سے اعلان کردہ آن لائن کلاسز لینے کے منصوبے سے مکمل بائیکاٹ کا اعلان کرتے ہیں اس کو مسترد کرتے ہیں کیونکہ اس منصوبے سے قبائلی اضلاع کے طلباء کو کوئی فائدہ نہیں پہنچ رہا بلکہ ان کا مستقبل تباہی کی طرف جا رہا ہے اگر حکومت نے ہمارے اس سنگین مسئلے کا نوٹس نہیں لیا اور ہمارے مطالبات نہیں مانے تو ہم دیگر طلباء تنظیمو ں کے ساتھ ملکر مل گیر سطح پر سخت احتجاج اور دھرنے دیں گے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -