آرمی ویلفیئر ہاؤسنگ سکیم میں بجلی کی طویل لوڈشیڈنگ کیخلاف احتجاجی مظاہرہ

  آرمی ویلفیئر ہاؤسنگ سکیم میں بجلی کی طویل لوڈشیڈنگ کیخلاف احتجاجی مظاہرہ

  

پشاور(سٹی رپورٹر)آرمی ویلفیئر ہاؤسنگ سکیم میں بجلی کی طویل لوڈشیڈنگ کیخلاف آرمی ویلفیئر ریذیڈنٹ سوسائٹی کے زیر اہتمام اتوار کے روزکوہاٹ روڈپشاور پر احتجاجی مظاہرہ کیا گیا اور مظاہرین نے واضح کیا کہ اگر بجلی لوڈشیڈنگ کا خاتمہ نہ کیا گیا تو واپڈا اور پیسکو حکام کیخلاف عدالت سے رجوع کرینگے مظاہرین کی قیادت آرمی ویلفیئر ریذیڈنٹ سوسائٹی کے صدر نور حسین شاہ، جنرل سیکرٹری مشرف اللہ،سیکرٹری پریس اینڈ انفارمیشن نذر حسین اور فنانس سیکرٹری شہرام خان آفریدی نے کی ان کا کہنا تھا کہ مذکورہ ہاؤسنگ سکیم میں ہر گھرانہ میٹرریڈنگ کے مطابق ماہانہ بلوں کی ادائیگی کرتا ہے سپریم کورٹ آف پاکستان کا بھی حکم ہے کہ جہاں میٹر کے مطابق بلوں کی ادائیگی ہوتی ہے وہاں لوڈ شیڈنگ نہیں ہو گی لیکن آرمی ویلفیئر ہاؤسنگ سوسائٹی میں آٹھ گھنٹے سے زیادہ بجلی لوڈ شیڈنگ جاری ہے بجلی اور گیس کی ناروا لوڈ شیڈنگ مذکورہ ہاؤسنگ اسکیم کی ترقی اور آبادکاری میں بہت بڑی رکاوٹ ہے اور اس سکیم کو ناکام کرنے اور وہاں کے باشندوں کے کروڑوں روپے کی سرمایہ کاری کو دریابرد کرنے کی سازش میں محکمہ واپڈا اورگیس لوڈشیڈنگ کے ذریعے ملوث پائے گئے ہیں بجلی فیڈر بھی سوسائٹی کا اپنا ہے اورواپڈا کی پراپرٹی نہیں اس ہاؤسنگ سکیم میں نہ تو بجلی چوری کی شکایات سامنے آئی ہیں اور نہ ہی واپڈا کے واجبات موجود ہیں تو پھر لوڈ شیڈنگ کیوں جاری ہے آرمی ویلفیئر سوسائٹی میں آٹھ گھنٹے لوڈشیڈنگ جاری رکھنا آئین پاکستان کی آرٹیکل 25 کی خلاف ورزی ہے انہوں نے مطالبہ کیا کہ آرمی ویلفیئر ہاؤسنگ سکیم پشاور اور راولپنڈی میں تعینات افسران اس اہم ترین عوامی مسئلہ کو حل کرنے کیلئے سرکاری سطح پر کردار ادا کرے کور کمانڈر پشاوراور واپڈا چیف بھی مذکورہ سکیم میں بجلی لوڈشیڈنگ ختم کرانے کیلئے اقدامات اٹھائیں ورنہ احتجاجی مظاہروں کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ شروع ہوگا جس کی تمام تر ذمہ داری واپڈا اور پیسکو حکام پر عائد ہوگی انہوں نے اعلان کیا کہ طویل لوڈشیڈنگ کرانے پر واپڈا ہاؤس اور پیسکو افسران کے خلاف پشاور ہائی کورٹ سے بھی رجوع کرینگے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -