سرحدی تنازع، بھارت اور چین کے ملٹری کمانڈرز کی ملاقات کا نتیجہ سامنے آگیا

سرحدی تنازع، بھارت اور چین کے ملٹری کمانڈرز کی ملاقات کا نتیجہ سامنے آگیا
سرحدی تنازع، بھارت اور چین کے ملٹری کمانڈرز کی ملاقات کا نتیجہ سامنے آگیا

  

بیجنگ(ڈیلی پاکستان آن لائن) جمعہ کو چین اور بھارت کے ملٹر ی کمانڈرز کی سرحدی کشیدگی پر ہونے والی ملاقات کے نتائج سامنے آگئے۔ دونوں ملکوں نے اس بات پر اتفاق کرلیا ہے کہ سرحدی کشیدگی کو پرامن طریقے سے حل کیاجائے گا۔

العربیہ نے بھارتی وزارت خارجہ کے حوالے سے بتایا ہے کہ طرفین نے سرحدی علاقوں میں دونوں ملکوں میں پہلے سے طے شدہ مختلف دو طرفہ سمجھوتوں کے مطابق صورت حال کو پُرامن طریقے سے حل کرنے سے اتفاق کیا ہے۔''انڈین وزارت خارجہ کے مطابق  بھارت اور چین کے کمانڈروں نے دنیا کی آبادی کے لحاظ سے دوبڑی اقوام کے درمیان دوطرفہ تعلقات کے لیے ''جلد حل'' کی ضرورت پر زوردیا ہے۔دونوں ملکوں کے فوجی کمانڈروں کے درمیان سرحدی علاقے میں حالیہ جھڑپوں کے بعد چوشل مولڈو کے علاقے میں یہ پہلی ملاقات ہےاور سِکم میں جھڑپوں کے بعد اعلیٰ سطح پر یہ پہلا رابطہ ہے۔

بھارتی بیان کے مطابق '' طرفین سرحدی علاقوں میں صورت حال اور امن وسلامتی کو یقینی بنانے کے لیے فوجی اور سفارتی روابط جاری رکھیں گے۔''

9 مئی کو ریاست سِکم کے انتہائی بلندی پر واقع سرحدی علاقے میں بھارتی اور چینی فوجیوں کے درمیان دوبدو لڑائی ہوئی تھی اور انھوں نے ایک دوسرے پر پتھراؤ کیا تھا جس کے نتیجےمیں فریقین کے متعدد فوجی زخمی ہوگئے تھے۔

چین اور بھارت کے درمیان 3500 کلومیٹر (2200 میل) طویل سرحد ہے لیکن دشوار گذار پہاڑی علاقہ ہونے کی وجہ سے اس کی مناسب طریقے سے حد بندی نہیں ہوئی ہے اور دونوں ملکوں ہی غیر شناختہ سرحدی علاقوں پر اپنا حق جتلاتے رہتے ہیں۔

مزید :

بین الاقوامی -