کابینہ نے زرعی ٹیوب ویلوں کیلئے بجلی کی مد میں 16ارب روپے سبسڈی کی منظوری دیدی

کابینہ نے زرعی ٹیوب ویلوں کیلئے بجلی کی مد میں 16ارب روپے سبسڈی کی منظوری دیدی

اسلام آباد (این این آئی)وفاقی کابینہ نے ملک سے بد عنوانی کے خاتمے کیلئے 10 نکاتی سفارشات ، زرعی ٹیوب ویلوں کیلئے بجلی کے مد میں 16 ارب روپے سبسڈی دینے ، ممنوعہ اور غیر ممنوعہ اسلحہ کی درآمد کیلئے قیمت کی بجائے تعداد کے لحاظ سے اسلحہ درآمد کرنے اور وفاقی لاءیونیورسٹی کے قیام کی منظوری دی ہے جبکہ وزیر اطلاعات قمر زمان کائرہ نے کہا ہے کہ نگران وزیراعظم کے معاملے پر حکومت اپوزیشن میں اتفاق رائے پیدا ہو اس کیلئے بھر پور کوششیں جاری ہیں ، 16 سے 19 مارچ کے دوران وزیراعظم اورقائد حزب اختلاف نے نگران وزیراعظم کے نام کا فیصلہ کرنا ہے اور اگر ان میں کوئی اتفاق رائے نہیں ہوتا تو پھر پارلیمانی کمیٹی فیصلہ کرے گی۔ ہمیں کسی ایجنسی نے نوٹ یا ووٹ نہیں دینے بلکہ عوام نے ووٹ دینے ہیں اور ابھی حال ہی میں ہونیوالے ضمنی انتخابا ت میں عوام نے ہم پر بھر پور اعتماد کا اظہار کیا ہے ،کسانوں کو سبسڈی دینا الیکشن کمیشن کے احکامات کی خلاف ورزی نہیں ہے ہم نے شدید تحفظات کے باوجود الیکشن کمیشن کے احکامات پر عملدرآمد کیا ہے آئین کے تحت حکومت اور پارلیمنٹ آخری وقت تک کام کرنے کے پابند ہیں ۔جمعرات کو وزیراعظم راجہ پرویز اشرف کی صدارت میں منعقد ہونیوالے وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد وزیر خزانہ ندیم مانڈوی والا ، وفاقی سیکرٹری اطلاعات اور پی آئی او عمران گردیزی کے ہمراہ میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے وزیر اطلاعات نے بتایا کہ وفاقی کابینہ کا یہ 130 واں اجلاس تھا ۔کابےنہ نے اوگرا آرڈےننس 2002کی شق 21کے تحت پالےسی گائےڈ لائنس پرقائم کردہ کابےنہ کمےٹی کی پےش کردہ پالےسی کی منظوری دی۔کابےنہ نے وزارت پٹرولےم وقدرتی وسائل اور اوگرا کے درمےان مسائل کو حل کی غرض سے قائم کمےٹی کو ڈرافٹ پالےسی گائےڈ لائن مرتب کرنے کا اختےار دےا۔ کابےنہ کمےٹی کی پےش کردہ پالےسی کی منظوری دی جس کے مطابق انگنت قےمت قدرتی گےس کے صارفےن سے وصول کی گئی ہے۔ کابےنہ نے وفاقی لاءےونےورسٹی اور عدالتی انتظامےہ کے قےام کی بھی منظوری دی۔صدر پاکستان ےونےورسٹی کے چانسلر ہوں گے۔کابےنہ نے کرپشن پر کابےنہ کمےٹی کی سفارشات کی بھی منظوری دی۔جن کے تحت معےشت کی ڈاکومنٹےشن، مالی رےونےو رےکارڈکی آٹومےشن، سرکاری شعبے کے اداروں کی نجکاری، کمپنےوں کے ڈھانچوں کا تعارف ،نےب کے معاملات کی آزادانہ آئےن سازی کےونکہ موجودہ نےب سسٹم آربےٹرےری ہے اور وفاقی نظام رکھنے والے ممالک مےں نہےں ہے،قومی انٹی کرپشن حکمت عملی کی تےاری ،آڈےٹر جنرل آف پاکستان کے دفترکو مضبوط بنانا،حکومتی رےونےو کے لاکھوں روپے کے عدالتی مقدمات کو نمٹانے کےلئے ضروری اقدمات ،بعض محکموں کےلئے خصوصی تنخواہ پےکےجزکا تعارف ملازمےن کے درمےان بددلی پےدا کرتا ہے جو حکومت کی خصوصی توجہ کا متقاضی ہے،سول ملازمےن ،بےورکرےٹس، آرمی افسران اور ججزاور اُن کے زےر کفالت افرادکے اثاثہ جات ظاہر کرناشامل ہے۔وزیراطلاعات نے بتایا کہ کابینہ نے ممنوع اور غےر ممنوع اسلحہ کی درآمد کےلئے طرےقہ کار وضع کرنے کےلئے کابےنہ نے سابقہ پرےکٹس کے مطابق قےمت کی بجائے تعدادکے حساب سے اسلحہ درآمد کرنے کی اجازت دےنے کا فےصلہ کےا ۔کابےنہ نے پاکستان بھر مےں زرعی ٹےوب وےلوں کےلئے بجلی کی مد مےں 16ارب روپے سبسڈی دےنے کی منظوری دی۔اس طرےقہ کار کو کابےنہ کمےٹی وضع کرے گی۔کابےنہ کو مالی سال 2013-16ءکےلئے بجٹ سٹرےٹجی سے متعلق آگاہ کےا گےا۔جس کی تفصےلات وزےر خزانہ وضع کرےں گے۔آئےن کے آرٹےکل 27(1)پر من وعن عمل درآمد کو ےقےنی بنانے اور قومی ہم آہنگی کو فروغ دےں گے تاکہ ہر طبقے اور علاقے سے تعلق رکھنے والے افرادکوپاکستان کی سول سروس مےں معقول نمائندگی دی جاسکے۔کابےنہ نے 14 اگست 2013 ءسے اگلے 20 سال کیلئے موجودہ انتظامات مےں توسےع کی منظوری دی۔

مزید : صفحہ اول