کراچی ،کوئٹہ حالات سے نمٹنے کےلئے سیاسی ، عسکری قیادت میں مشورے ۔

کراچی ،کوئٹہ حالات سے نمٹنے کےلئے سیاسی ، عسکری قیادت میں مشورے ۔

کراچی ( سٹاف رپورٹر+این این آئی) کراچی میں رینجرز کے دو اہلکاروں، پولیس کانسٹبل اور دو لاپتہ افراد سمیت9 افراد جاں بحق اور متعدد زخمی ہوگئے، رات گئے قانون نافذ کرنے والے ادارے نے مختلف علاقوں میں کارروائی کرکے 13مشتبہ افراد کو حراست میں لے لیا۔ واقعات کے مطابق جمعرات کی صبح پاک کالونی تھانے کی حدود میوہ شاہ قبرستان سے لیاری کے علاقے سے لاپتہ ہونے والے رینجرز کے افسر اور اہلکار کی تشدد زدہ لاشیں ملیں۔ مقتولین کی شناخت رینجرز افسر منیربھٹو اور ہیڈ کانسٹیبل اعجاز بلوچ کے نام سے ہوئی ہیں۔ منگھو پیر کے علاقے خیر آباد نادرن بائی پاس زیبو گوٹھ سے دو مغوی نوجوانوں کی گلے میں پھندا لگی لاشیں برآمد ہوئی ہیں ۔ مقتولین کی جیبوں سے ملنے والی پرچیوں پر ایک کانام مقبول احمد ولد نواب خان اور دوسرے کا نام بابو افتخار ولد منصور خان درج ہے۔ پاک کالونی کے علاقے میوہ شاہ قبرستان کے ایم سی چوک سے ایک نوجوان کی تشدد زدہ لاش ملی ہے۔ مقتول کی شناخت38سالہ عبدالستار ولد محمد حیات کے نام سے ہوئی ہے ۔ سچل کے علاقے بھٹائی آباد میں دہشت گردوں نے گھر میں گھس کر اے ایس آئی 45 سالہ محرم علی چانڈیو ولد اسحاق چانڈیو کو ہلاک کردیا۔ بلدیہ ٹاون کے علاقے گلشن غازی میں ایک منی بس میں فائرنگ سے نجی فیکٹری کا ملازم 19سالہ جاویدولد بشیر ہلاک ہوگیا۔ ملیر کھوکھرا پار نمبر چار میں مکان نمبر22/4 گھر میں گھس کر 42سالہ عبدالعلیم ولد اشرف کو گولیاں مارکر قتل کردیا ۔مقتول کچھی رابطہ کمیٹی کا کارکن تھا ۔ڈیفنس تھانے کی حدود خیابان بدر فیز 1اسٹریٹ 22بنگلہ نمبر 5A/2میں 50سالہ محمد سلیم کیانی ولد شاہنواز کیانی کی سر میں گولی لگی لاش ملی۔ دوسری جانب رات گئے قانون نافذ کرنے والے ادارے نے گلشن اقبال کی مختلف کچی آبادیوں میں کارروائی کرتے ہوئے تیرہ مشتبہ افراد کو حراست میں لے کر نامعلوم مقام پر منتقل کر دیا۔ کراچی میں لیاری کے علاقے موسیٰ لین، آٹہ چوک، بغدادی، پھول پتی لین، دبئی چوک، چیل چوک اور لی مارکیٹ میں رینجرز نے آپریشن کے دوران 3 مغویوں کو بازیاب کرا لیا۔ 8 افراد کو گرفتار بھی کرلیا گیا جبکہ لیاری کے مختلف علاقوں میں فائرنگ سے 4 افراد زخمی ہوگئے۔ دوسری جانب رینجرز نے پرانا گولیمار کے علاقے میں بھی سرچ آپریشن شروع کردیا۔ گزشتہ روز لیاری کے علاقے 8 چوک سے رینجرز کے 2 اہلکاروں کے اغواءاور قتل کے بعد سرچ آپریشن جاری ہے۔ لیاری کے 22 داخلی اور خارجی راستوں پر رینجرز کے جوان تعینات کردیے گئے ہیں۔ آپریشن میں ایک ہزار اہلکار، ایک درجن سے زائد بکتر بند گاڑیاں اور موٹر سائیکل سکواڈ حصہ لے رہا ہے۔ علاقے کے جرائم پیشہ افراد اور گینگ وار میں ملوث ملزمان کی فہرست تیار کرلی گئی ہے۔ رینجرز ذرائع کے مطابق 3 مغویوں کو بازیاب کرا لیا گیا ہے جبکہ آپریشن کے دوران 8 افراد کو گرفتار بھی کیا گیا ہے۔ دوسری جانب آپریشن کے خلاف لیاری کے مختلف علاقوں میں ملیر میمن گوٹھ میں احتجاج کیا گیا۔ جبکہ مشتعل افراد نے سڑکوں پر ٹائر جلائے۔ ملیر میں احتجاج کے دوران کاروبار اور دکانیں بند ہوگئیں۔ ریسکیو ذرائع کے مطابق لیاری کے مختلف علاقوں میں فائرنگ کے واقعات میں 4 افراد زخمی ہوگئے جنہیں ہسپتال منتقل کردیا گیا۔

مزید : صفحہ اول