فلسطینیوں کی جانب سے قبلہ اول کے دفاع کیلئے زیادہ سے زیادہ تعداد میں مسجد اقصیٰ میں آنے کارجحان قابل تعریف ہے، الشیخ محمد حسین

فلسطینیوں کی جانب سے قبلہ اول کے دفاع کیلئے زیادہ سے زیادہ تعداد میں مسجد ...

  

مقبوضہ بیت المقدس (این این آئی) فلسطین اور دیار مقدسہ کے مفتی اعظم الشیخ محمد حسین نے فلسطینی شہریوں کی جانب سے قبلہ اول کے دفاع کیلئے زیادہ سے زیادہ تعداد میں مسجد اقصیٰ میں آنے کے رجحان کی تعریف کرتے ہوئے یہودی شرپسندوں کی جانب سے فلسطین کے مقدس مقامات پر حملوں کی شدید مذمت کی ہے۔ اطلاعات کے مطابق مسجد اقصیٰ میں نماز جمعہ سے قبل جمعہ کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یہودی شرپسند سوچی سمجھی منصوبہ بندی کے تحت انتخابی مہمات میں مسلمانوں کے مقدس مقامات کو نشانہ بنانے کی سازشیں کر رہے ہیں۔

انتخابی مہمات کے دوران مسجد اقصیٰ سمیت فلسطین میں موجود دیگر مقدس مقامات کو نشانہ بنانا یہودیوں کا شرمناک اور گھٹیا فعل ہے جس کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے۔ انہوں نے مسجد اقصیٰ کے مرابطین اور خواتین مرابطات کی جانب سے قبلہ اول کے دفاع کیلئے مسلسل مقدس مقام پر آمد کی تعریف کی اور کہا کہ حقیقی معنوں میں وہی لوگ تعریف اور تحسین کے قابل ہیں جو اپنے دنیا ضروری امور کو چھوڑ اللہ کے اس عظم گھر کو آباد کرنے اور اس کے دفاع کیلئے دن رات دوڑے چلے آرہے ہیں۔

الشیخ محمد حسین کا کہنا تھا کہ یہودی سیاسی جماعتیں اپنا ووٹ بینک بڑھانے اور یہودی شدت پسندوں کا زیادہ سے زیادہ ووٹ حاصل کرنے کیلئے فلسطین میں مقدس مقامات کو نشانہ بنانے کا شرمناک کھیل کھیلتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہودی گروپوں اور شرپسندوں کی ٹولیوں کا مقصد صرف نام نہاد تلمودی تعلیمات کے مطابق مسجد اقصیٰ میں داخل ہو کرمذہبی رسومات ادا کرنا ہی نہیں بلکہ وہ مقدس مقامات کی بے حرمتی کی نظر سے آتی ہیں۔

مزید :

عالمی منظر -