مو یشی منڈیو ں میں ٹھکیداری نظام ختم سالانہ 50ارب کا نقصان

مو یشی منڈیو ں میں ٹھکیداری نظام ختم سالانہ 50ارب کا نقصان

  

 لاہور ( اسد اقبال )پنجاب حکو مت کی جانب سے مو یشی منڈیو ں کا نظام کیٹل مارکیٹ مینجمنٹ کے سپرد کرنے سے لاہور سمیت پنجاب بھر کی منڈیو ں میں بیو پاریو ں کو جانو روں کی خر یدو فروخت سمیت کئی ایک مسائل کا سامنا ہے وہیں ٹھیکیداری نظام ختم ہو نے سے پنجاب حکو مت کو سالانہ 50ارب روپے نقصان ہوا ہے ۔ دوسری جانب ٹھیکیدارایسو سی ایشن نے عدالت عالیہ میں ٹھکیداری نظا م کے خلاف رٹ پٹیشن دائر کر دی ہے ۔ تفصیلا ت کے مطابق لاہور سمیت پنجاب بھر میں 182مویشی منڈیا ں قائم ہیں جہاں پر ٹھیکیداری نظام کے تحت پنجاب حکو مت کو سالانہ اربو ں روپے ریو نیو اکھٹا ہوتا تھا تاہم پنجاب حکو مت نے مو یشی منڈیو ں کے نظام میں اصلا حات لا نے کے لیے ٹھیکیداری نظام ختم کر کے نظام پر ائیو یٹ مارکیٹ کمپنی کے سپر د کر دیا جس کے بعد حکو متی ریو نیو میں کمی جبکہ پنجاب بھر سے آنے والے بیو پاریوں کو منڈیو ں میں کئی ایک مسائل کا سامنا ہے ۔روزنا مہ پاکستان سے خصو صی گفتگو کر تے ہوئے انجمن مویشی منڈیاں ٹھیکیدار ایسو سی ایشن کے رہنماء حاجی اسماعیل اور اشرف گو ندل کا کہنا تھا کہ مو یشی منڈیو ں کا نظام کیٹل مارکیٹ مینجمنٹ کمپنیو ں کے حوالے کر نے سے جہاں پنجاب حکو مت کو سالا نہ اربوں روپے کا نقصان ہونا ہے وہیں لاکھو ں بیو پاریوں کی ایڈوانس رقم ڈو بنے کا اندیشہ لا حق ہو گیا تھا اور ملک بھر سے لاہور کی سب سے بڑی مویشی منڈی شاہ پور کانجراں میں بیو پاریو ں کو نئے نظام کے تحت جانوروں کی خر یدو فروخت سمیت ،پارکنگ ، ما ل لو ڈ اور ان لو ڈ کر نے کے من چاہی فیس ، چارہ ، کھر لی ، شامیا نے ودیگر لو ازماتجیسے اخراجات سے مسائل کا سامنا تھا جس کے پیش نظر شاہ پور کانجراں مو یشی منڈی میں جانوروں کی خر یدوفروخت کا تناسب کم ہو گیا تھا تاہم ہائیکورٹ میں درخواست دائر ہو نے کے بعد عدالت نے پنجاب حکو مت کو ہدایت کی کہ پنجاب بھر میں مو یشی منڈیو ں کا پرانا نظام بحال کیا جائے تاکہ حکومتی خزانہ بھی خسارے سے بچ سکے اور بیو پاریو ں کے مسائل پر بھی قابو پایا جا سکے ۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -