عبیرہ قتل کیس،ملزما ن کو 14روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیجنے کا حکم

عبیرہ قتل کیس،ملزما ن کو 14روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیجنے کا حکم

  

 لاہور(نامہ نگار)ماڈل عبیرہ کو زہر دے کر قتل کرنے کے مقدمہ میں ملوث ملزمہ عظمیٰ راؤ عرف طوبی اور اس کے دو مبینہ ساتھی ملزموں فاروق الرحمٰن اور ملزم حکیم ذیشان حیدر کوپولیس نے گزشتہ روز سخت سیکیورٹی میں ضلعی کچہری میں پیش کیا،جوڈیشل مجسٹریٹ محمد راشدنے ملزمان کو 14روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بجھوانے کا حکم دے دیاہے ۔ملزمہ کے وکیل کا کہنا ہے کہ وہ 9مارچ کو ملزمہ طوبیٰ کی ضمانت کے لئے سیشن عدالت میں درخواست دائر کر یں گے۔عدالت میں ماڈل عبیرہ کے قتل کی ملزمہ طوبی کو دو ساتھی ملزمان کے ہمراہ 6 روزہ جسمانی ریمانڈ مکمل ہونے پر گزشتہ روز پولیس کی جانب سے عدالت میں پیش کیا گیا، ملزمہ طوبی کی 3 سالہ بیٹی عشا بابر بھی اس کے ساتھ تھی،تفتیشی آفیسر ڈی ایس پی تھانہ اسلام پورہ سرکل مہر امتیاز کی ٹیم نے ملزمان کو عدالت میں پیش کرتے ہوئے موقف اختیار کیا کہ ملزمان سے تفیش مکمل ہو چکی ہے ،ملزمہ طوبٰی نے پولیس کے روبرو اپنے جرم کا اعتراف بھی کر لیا ہے تاہم مزید جسمانی ریمانڈ کی ضرورت نہیں ہے جس پرعدالت نے پولیس کی جانب سے جسمانی ریمانڈ کی استدعا نہ کئے جانے پر ملزمان ،ملزمہ عظمیٰ راؤ عرف طوبٰی، ملزم فاروق الرحمٰن اور ملزم حکیم ذیشان حیدر کو 14روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بجھوانے کا احکامات جاری کر دیئے۔استغاثہ کے مطابق ملزمہ عظمی راؤ عرف طوبی پر الزام ہے کہ اس نے اپنی سہیلی ماڈل عبیرہ کو زہر دے کر قتل کیا اور لاش کو سوٹ کیس میں بند کرکے سکائی ویز بس سٹینڈ پر چھوڑ دیاتھا،ملزمہ کے وکیل میاں محمد رمضان ایڈووکٹ نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ان کی موکلہ کانام ایف ائی آر میں نہیں ہے ضمنی رپورٹ میں اس کا نام شامل کیا گیا ہے پولیس شک کی بنیاد پرقتل کے مقدمات میں ملوث کر رہی ہے ،مقتولہ عبیرہ کی موت کا وقت اور وجہ کا ابھی تک تعین نہیں ہوا ملزمہ کو جیل میں نہیں رکھا جا سکتا ،9مارچ کو وہ ملزمہ طوبیٰ کی ضمانت کے لئے سیشن عدالت میں درخواست دائر کر یں گے جبکہ ملزمہ کے ساتھی ملزم فاروق الرحمٰن اور حکیم ذیشان حیدر کا کہنا تھا وہ بے گناہ ہیں پولیس نے طوبی کے ساتھ مل کر ان کو ملوث کیا ان کا عبیر ا کے قتل سے کوئی تعلق نہیں تاہم انہیں ا مید ہے عدالت ان کے ساتھ انصاف کرے گی۔

مزید :

صفحہ آخر -