پاکستان سے 10سے 15افراد بھارت گئے ،فرنٹ فٹ پر آ کر کھیلا تو ’’پرانے قصے‘‘کھلیں گے ، پچھلی حکومت نے ’’ایوان صدر ‘‘ کی سفارش پر مولانا عبد العزیزکو سہولیات دیں : چوہدری نثار علی

پاکستان سے 10سے 15افراد بھارت گئے ،فرنٹ فٹ پر آ کر کھیلا تو ’’پرانے ...
پاکستان سے 10سے 15افراد بھارت گئے ،فرنٹ فٹ پر آ کر کھیلا تو ’’پرانے قصے‘‘کھلیں گے ، پچھلی حکومت نے ’’ایوان صدر ‘‘ کی سفارش پر مولانا عبد العزیزکو سہولیات دیں : چوہدری نثار علی

  


اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے تصدیق کی ہے کہ  بھارت میں تخریبی کاروائیوں کے لئے پاکستان سے  

10سے 15افراد  بھارت گئے ہیں ’’ نان اسٹیٹ ایکٹر ز ‘‘سے  جان چھڑانے کے لیے سول اور ملٹر ی سطح پر کوششیں کر رہے ہیں،کیونکہ ان ’’نان اسٹیٹ ایکٹرز ‘‘ کے اقدامات پاکستان اور ہمارے اداروں کے گلے پڑ جاتے ہیں ، انٹیلی جنس شیئرنگ صرف بھارت سے نہیں خطے کے دوسرے ملکوں کے ساتھ بھی ہے ،بھارت سے زیادہ  افغانستان کے ساتھ  انٹیلی جنس شیئر کرتے ہیں ، اگر میں فرنٹ فٹ پر کھیلنا شروع کروں تو ماضی کے قصے کھلیں گے۔

سینیٹ میں نیشنل ایکشن پلان پر اراکین کے سوالوں کے جواب دیتے ہوئے وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے کہا کہ مولانا عبدالعزیز کے خلاف 2013 سے قبل 33 مقدمات جن میں 11حساس نوعیت کے تھے اور وہ 28 مقدموں میں بری ہوئے اور 3 مقدمات میں صرف 45روپے جرمانہ کیا گیا، وزیر داخلہ نے انکشاف کیا کہ پچھلے دور میں مولانا عبدالعزیز کو تمام سہولیات ایوان صدر کی سفارش پر دی گئیں، ایچ الیون اسلام آباد میں سول ڈیفنس کی 20کنال زمین بھی پچھلے دور میں عطیہ کی گئی، سیکیورٹی گارڈز فراہم کئے، موجودہ حکومت نے مولانا سے سرکاری سیکیورٹی اٹھائی ، بڑے مقدمات میں تو پچھلی حکومت نے بری کیا، جماعۃ الدعوۃ کو بلیک لسٹ کیا گیا،61 تنظیموں کو کالعدم قرار دیا گیا ہے، پچھلے دور حکومت کے پاس کالعدم جماعتوں کی لسٹ ہی موجود نہیں تھی مگر موجودہ حکومت نے آ کر لسٹ مرتب کی، نیشنل ایکشن پلان کے 20 نکات میں سے 10 نکات پر عملدرآمد صوبوں کی ذمہ داری ہے، شیڈول 4 کے تحت 8 ہزار 200 لوگوں کی نشاندہی کی گئی اور ان کا نام ای سی ایل میں شامل کر کے انکی نقل و حمل پر پابندی لگائی گئی، کسی غیر ملکی کو پاکستانی شناختی کارڈ جاری نہیں کرنے دیا جائے گا، جو نادرا ملازمین کسی غیر ملکی کو شناختی کارڈ بنا کر دے گا وہ سیدھا جیل جائے گا، اس وقت تک غیر ملکیوں کو شناختی کارڈ بنا کر دینے پر 200نادرا ملازمین جیل میں بند ہیں، کسی پختون کے ساتھ کوئی زیادتی نہیں ہو گی، اب تک ایک لاکھ مشکوک شناختی کارڈ بلاک کئے گئے ہیں، کسی افغان پشتون کا شناختی کارڈ بنے گا نہ پاسپورٹ، کسی پاکستانی پختون کا شناختی کارڈ بلاک ہوا ہے تو اسے درست کیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ  پوائنٹ سکورنگ نہیں کرنی چاہیے، نیشنل ایکشن پلان کے 10 نکات پر عمل کرانا صوبوں کی ذمہ داری ہے اور یہ میں نہیں بلکہ آئین کہہ رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اڑھائی سالوں میں کسی بھی صوبائی حکومت کو دہشت گردی کے واقعے کے بعد مورد الزام نہیں ٹھہرایا، کمزوریوں کی نشاندہی ہونی چاہیے الزام تراشی سے گریز کیا جائے، 20 میں سے 15 نکات پر پیش رفت مثبت ہے اور 5 پر تھوڑی کم ہے اور اس حوالے سے تمام سول فوجی قیادت سمیت صوبوں کے وزراء اعلیٰ کا اجلاس بھی ہونے والا ہے، مدرسہ پاکستان کے حب الوطنی کے تاثرات رکھتے ہیں، تو مجھ پر تنقید ہوتی ہے، مدارس کی رجسٹریشن صرف دو ہفتوں میں کی گئیں اور مدارس نے تعاون کیا، نیکٹا کا بجٹ 1.3 بلین روپے ریلیز کیا گیا ہے، کوئی آفیسر اس طرف آنا نہیں چاہتا تھا مگر اب خصوصی پیکج کا اعلان کیا گیا ہے اور اس پر پیش رفت جاری ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر کوئی عدالت میں چلا گیا ہے تو ہم اسے نہیں روک سکتے، نیکٹا کا قانون پچھلی حکومت نے بنایا، اگر کوئی اسے چیلنج کرتا ہو تو ہم کیس کی پیروی کریں گے۔چوہدری نثار علی نے کہا کہ داعش کے ریڈیو سٹیشن کے حوالے سے افغان حکومت سے بات ہو رہی ہے ،فاٹا اور خیبرپختونخوا کے کچھ علاقوں میں افغانستان سے ریڈیو اور سمز کے معاملات اٹھائے بھی ہیں اور اٹھائیں گے بھی، سابق گورنر کے پی کے نے کمیٹی بنائی گئی تھی جسکی سفارشات حوصلہ افزا نہیں تھیں، اور2مختلف کمیٹیاں فاٹا اصلاحات کے حوالے سے بنائی گئیں ہیں۔ چوہدری نثار علی خان نے کہا کہ مولانا عبدالعزیز کو ہمیں امتناع کی فائل نہیں دینی چاہیے، نیکٹا کے مالی امور کے ذمہ داری وزرات داخلہ کے ذمہ نہیں ہے ، اور نیکٹا کا چیئرمین تمام معاملات کا فیصلہ کرتا اور ایک خود مختارادارہ ہے۔ اگر میں فرنٹ فٹ پر کھیلنا شروع کروں تو ماضی کے قصے کھلیں گے،مشرف دور میں اور پچھلے دور میں نیکٹا کو 1دفتر بھی نہیں ملا اور اس ادارے کا چیف بھی نہیں ملا،نیکٹا کوافسران اور ملازمین کے حوالے سے وزرات داخلہ نے کردار اداکیا ہے نیکٹا نے کراچی اور ڈی آئی خان جیل اور واہگہ بارڈر اور باچاخان یونیورسٹی ،آرمی پبلک سکول اور دیگر معاملات پر انٹیلی جنس شیرنگ کی قلیل وسائل کی حامل نیکٹانے جو کام کیے ہیں وہ قابل ستائش ہیں ۔آج اگر کسی کو حکومت کی جانب سے امن وامان کی بحالی میں جو کردار کسی کو نظر نہیں آرہا مگر بیرونی ممالک سے آنے والوں کوضرور پتا چل جاتا ہے1سال میں22سو اور ایک ہفتے5سے6دھماکے ہوتے تھے، مگر اب بہتری آئی ہے، ممبئی واقعہ او دیگر واقعات پیپلز پارٹی کے دور میں ہوئے او ہم نے آکر بلیک لسٹ کیا گای 61جماعتوں پر پابندی لگائی گئی،  شیڈول 4کے تحت8ہزار2سو لوگوں کی نشاندہی کی اور کئی لوگوں کے نام ای سی ایل میں ڈالے گئے،کالعدم تنظیموں اور شیڈول کے لوگ ملک سے باہر نہیں جاسکتے، زبانی تیر چلانے سے کچھ نہیں ہوتا جماعۃ الدعوۃ کو بلیک لسٹ کیا گیاہے اور اگر کالعدم ہوگئی تو شیڈول 4پرآجائیگی اس سے قبل کالعدم تنظیموں کی لسٹ ہی نہیں تھی، رینجرز کے حوالے سے حکومت سندھ نے اعدادوشمار فراہم کیے رینجرز کا مدعایہ ہے کہ پراسکیوشن کمزور ہے۔اس حوالے سے جواب حکومت سندھ سے لیا جائے کیونکہ وہاں پیپلز پارٹی کی حکومت ہے،رینجرز گرفتارکرکے پولیس کے حوالے کردیتی ہے، چوہدری نثار نے کہاکہ مولانا عبدالعزیز کے خلاف 2013سے پہلے33کیس رجسٹرڈ ہوئے11نہایت سنجیدہ کیسز کی تفتیش پچھلے دور میں ہوئی آپریشن میں کئی ایک قیمتی جانیں ضائع ہوئیں، مولانا عبدالعزیز کو ایک کوٹھی میں رکھاگیا جو اسلام آباد میں واقع ہے اور سول ڈیفنس کی20کنال زمین عطیہ کی گئی، انہیں پچھلے دور حکومت میں خطبے کی اجازت دی گئی تھی،33میں سے 28کیسوں میں مولانا عبدالعزیز بری اور 3کیسوں میں 45 روپے جرمانہ ہوا اور جن میں بری ہوا ان پر کورٹ نیکاہکہ کمزور پراسکیوشن ہوئی تھی او پچھلی حکومت نے گارڈز بھی فراہم کیے اور تمام سہولیات ایوان صدر کی جانب سے دی گئیں تھیں اگر عدالت نے کیس ختم کیا ہو تو وہ کمزور پراسیکوشن ہے، کچھ لوگ کراچی سے آکر اگر کسی کی آنکھ میں انگلیاں ڈالے اور وہ شخص وہاں موجود ہی نہیں ہے۔ وزیر داخلہ نے کہا کہ کسی غیر ملکی کو پاکستانی شناختی کارڈ جاری نہیں کرنے دیا جائے گا، جو نادرا ملازمین کسی غیر ملکی کو شناختی کارڈ بنا کر دے گا وہ سیدھا جیل جائے گا، اس وقت تک غیر ملکیوں کو شناختی کارڈ بنا کر دینے پر 200نادرا ملازمین جیل میں بند ہیں، کسی پختون کے ساتھ کوئی زیادتی نہیں ہو گی، اب تک ایک لاکھ مشکوک شناختی کارڈ بلاک کئے گئے ہیں، کسی افغان پشتون کا شناختی کارڈ بنے گا نہ پاسپورٹ۔ انہوں نے کہا کہ کسی پاکستانی پختون کا شناختی کارڈ بلاک ہوا ہے تو اسے درست کیا جائے گا۔

مزید : قومی /اہم خبریں