نیب ریفرنسز میں نواز شریف کیخلاف کوئی ثبوت نہیں ملے: دنیال عزیز،طارق فضل

نیب ریفرنسز میں نواز شریف کیخلاف کوئی ثبوت نہیں ملے: دنیال عزیز،طارق فضل

اسلام آباد (این این آئی)وفاقی وزراء دانیا ل عزیز اور طارق فضل چوہدری نے کہاہے سابق وزیر اعظم نوازشریف کیخلاف نیب ریفرنسز کو کچھ ماہ مکمل ہونے کے باوجود کسی قسم کے کوئی ثبوت نہیں ملے،نیب کے برطانوی گواہ کہہ گئے ہیں کیلبری فونٹ 2005ء سے ڈاؤن لوڈ کر کے استعمال میں لایا جا رہا ہے، مسلم لیگ (ن) نے سپریم کورٹ کے تمام حکم اور فیصلے مانے ہیں، ہم انصاف کے طلبگار ہیں،جس جماعت نے اسلام آباد میں سو دن سے زائد کا دھرنا دیا ٗ لاک ڈاؤن کے اعلان کئے ٗ سپریم کورٹ کے حکم کی خلاف ورزی کی اس کیخلاف کسی قسم کی کوئی کارروائی نہیں کی گئی ٗسیاسی جماعتیں سیاسی میدان میں ہمارا مقابلہ نہیں کر سکتیں ۔ بدھ کو پی آئی ڈی میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ وزیر مملکت برائے کیڈ ڈاکٹر طارق فضل چوہدری نے کہا سابق وزیراعظم نواز شریف کیخلاف قومی احتساب بیورو میں چار ریفرنسز دائر کئے گئے تھے اور سپریم کورٹ نے 6 ماہ کی مدت مقرر کرکے اس پر ایک نگران جج مقرر کیا تھا، 7 مارچ 2018ء کو 6 ماہ کی مدت مکمل ہونے کے باوجود کسی قسم کا کوئی ثبوت نہیں ملا جبکہ اس میں مزید 2 ماہ کی توسیع کر دی گئی ہے، جو کام 6 ماہ میں نہیں ہوا وہ 2 ماہ میں کیا ہو گا۔ جو ریفرنس دائر کئے گئے تھے ان کیخلاف اگر ٹھوس شواہد مل جاتے تو مزید ضمنی ریفرنسز دائر کرنے کی ضرورت کیوں پڑتی۔ یہ ایک انوکھا مقد مہ ہے، آج تک کسی وزیراعظم نے اتنی پیشیاں نہیں بھگتیں جتنی نواز شریف نے بھگتیں ہیں، جتنی بار نواز شریف عدالت کے سامنے پیش ہوئے کوئی بھی وزیراعظم اتنی بار کسی عدالت میں پیش نہیں ہوا، مختلف سیاسی جماعتیں مسلم لیگ (ن) کی سیاسی ٹارگٹ کلنگ چاہتی ہیں، وہ میدان میں ہمارا مقابلہ نہیں کر سکتیں اور نہ کر سکی ہیں، ان کا ایک ہی مقصد ہے کہ نواز شریف کو عدالت سے سزا ہو حالانکہ نواز شریف کی پذیزائی اور مقبولیت میں دن بدن اضافہ ہو رہا ہے اور عوام کا ٹھاٹھیں مارتا ہوا سمندر ان کیساتھ ہے، وہ حب الوطنی کی مثال بن چکے ہیں۔ یہ صرف ایک نواز شریف کا معاملہ نہیں بلکہ گزشتہ 70 برسوں سے جو 18 وزراء اعظم گزرے ہیں ان میں سے کوئی بھی اپنی مدت پوری نہیں کر سکا، اگر 70ء کے بعد کا ہی اندازہ لگائیں تو جس لیڈر نے عوامی مقبولیت اور پذیرائی حاصل کی اسے پھانسی لگا دیا گیا یا قتل کر دیا گیا یا جعلی مقدمہ درج کرکے جلا وطن کر دیا گیا ۔ نیب نے ہمارے خلاف جو بھی گواہ پیش کئے وہ ہمارے حق میں گواہی دے چکے ہیں۔اس موقع پر دانیال عزیز نے کہا پی ٹی آئی نے پورے ملک کو لاک ڈاؤن کرنے کی کال دی اور عدالتی حکم کی خلاف ورزی کی، اس کیخلاف کسی قسم کی کارروائی نہیں کی گئی۔ نواز شریف کے خلاف 6 ماہ کی مدت گزرنے کے باوجود بھی کسی قسم کا کوئی ٹھوس ثبوت نہیں ملا۔ آج بھی کیس کے متعلق وہی حالات ہیں جو 6 ماہ پہلے تھے، جتنے بھی ریفرنسز دائر کئے گئے ان سے متعلق ثبوت تلاش کئے گئے مگر کسی قسم کا کوئی ثبوت نہیں ملا اور مقررہ وقت میں مزید دو وقت کی توسیع کر دی گئی۔ سارے ریفرنسز مخالفت پر مبنی ہیں، اصل حقیقت سامنے آ رہی ہے اور یہ سارا پلندہ فلاپ ہو رہا ہے۔ عمران خان نے سپریم کورٹ کا حکم نہیں مانا مگر اس کیخلاف کسی قسم کی کارروائی نہیں کی گئی۔ ہم سب سے بڑی سیاسی جماعت ہیں، الیکشن ہم جیت رہے ہیں، نواز شریف پر مقدمات کوئی نئی بات نہیں، اس سے قبل بھی وہ درجنوں مقدمات کا سامنا کر چکے ہیں۔

مزید : صفحہ آخر