انسانی حقوق کے نام نہاد علمبردار ملک کو لبرل بنانا چاہتے ہیں: اعزاز اللہ

  انسانی حقوق کے نام نہاد علمبردار ملک کو لبرل بنانا چاہتے ہیں: اعزاز اللہ

  



بنوں (بیورورپورٹ)جمعیت علماء اسلام ضلع بنوں کے ضلعی سیکرٹری اطلاعات مولانا اعزازاللہ حقانی نے کہا ہے کہ انسانی حقوق کے بعض نام نہاد علمبردار غیر ملکی فنڈنگ کے بل بوتے پر پاکستان اور اسلام کو غیر مستحکم اور لبرل بنانا چاہتے ہیں جس کو کسی صورت بھی قبول نہیں کریں گے ماروی سرمد اور دیگر این جی اوز کی جانب سے میرا جسم میری مرضی کا نعرہ امپورٹیڈ ہے جس کا مقصد کلمے کے نام پر آزاد ملک میں بے حیائی اور فحاشی کو عام کرنے اور گھریلو سسٹم کو مکمل طور پر تباہ و برباد کرنا ہے، پلے کارڈز پر نازیبا الفاظ کے استعمال سے مملکت خداداد کے غیوراور اسلام پسند عوام کے سر اسلامی دنیا میں شرم سے جھک گئے ہیں.پاکستانی عدالت ان مخصوص مغربی ایجنٹوں کی فرسودہ عورت مارچ پر فوری طور پر مکمل پابندی عائد کرکے نام نہاد انسانی حقوق کے علمبرداروں کے فارن فنڈنگ کے ایجنڈے کو بے نقاب کیا جائے ریاست مدینہ کے علمبردار، عورت مارچ میں میری جسم میری مرضی کے مذموم نعرے پر خاموش، ملک کو سیکولر سٹیٹ نہیں بننے دیں گے اسلام نے عورت کو مکمل حقوق دیئے ہیں مغربی ایجنٹ ان حقوق کو چھیننے کے لیے میدان میں نکل گئے ہیں جس کا راستہ روکنا ہر پاکستانی کا فرض بنتا ہے مولانا اعزازاللہ حقانی نے معروف ڈرامہ نگار خلیل الرحمٰن قمر کی طرف سے ملک پاکستان میں فحاشی و عریانی کا قلع قمع کرنے کے عزم پر ان کو زبردست الفاظ میں خراج تحسین پیش کیا

مزید : پشاورصفحہ آخر