سابق ولی عہد سمیت سعودی شاہی خاندان کے 3اہم ارکان گرفتار،بغاوت کا الزام

          سابق ولی عہد سمیت سعودی شاہی خاندان کے 3اہم ارکان گرفتار،بغاوت کا ...

  



ریاض(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) سعودی حکومت نے شاہی خاندان کے 3 اہم ارکان کو گرفتار کر لیا۔ گرفتار کئے جانے والوں میں سعودی فرمانروا شاہ سلمان کے چھوٹے بھائی شہزادہ احمد بن عبدالعزیز اور بھتیجے محمد بن نائف اور ان کے چھوٹے بھائی نواف بن نائف شامل ہیں۔امریکی میڈیا،غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق نقاب پوش سعودی گارڈز نے شاہی خاندان کی ان شخصیات کو جمعے کے روز انکی رہائش گاہوں سے حراست میں لیا اور ان کی رہائش گاہوں کی تلاشی بھی لی گئی۔خبر رساں ادارے کے مطابق ابھی تک یہ واضح نہیں ہے کہ شاہی خاندان کے ان سینیئر ارکان کو کن الزامات کے تحت گرفتار کیا گیا۔ سعودی حکومت نے بھی اس حوالے سے ابھی تک کوئی بیان جاری نہیں کیا۔ تاہم ذرائع کے مطابق ان افراد کو بغاوت کے الزام میں گرفتار کیا گیا ہے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق رائٹرز سمیت مختلف نیوز ایجنسیوں اور دیگر میڈیا اداروں کی طرف سے سعودی حکومت سے ان گرفتاریوں کے حوالے سے بیان لینے کی کوششیں بھی کی گئیں تاہم ریاض حکومت نے اب تک کوئی وضاحت نہیں کی۔شاہ سلمان نے 2017ء میں اپنے بیٹے محمد بن سلمان کو محمد بن نائف کی جگہ سعودی ولی عہد مقرر کر کے اقتدار پر اپنی گرفت مضبوط کر لی تھی۔ محمد بن نائف تب سے اب تک عملی طور پر نظر بند تھے اور اْن کی سرگرمیوں کی نگرانی بھی جاری تھی۔2017 میں ولی عہد مقرر ہونے کے بعد محمد بن سلمان نے انسداد کرپشن کے نام پر شاہی خاندان کی کئی شخصیات، حکومتی وزرا اور کاروباری شخصیات کو حراست میں لے لیا تھا۔شہزادہ محمد بن سلمان ہی عملی طور پر سعودی عرب پر حکومت کر رہے ہیں۔ امریکی اخبار نیویارک ٹائمز کے مطابق شاہی خاندان کے ان افراد کو محمد بن سلمان کے حکم پر ہی گرفتار کیا گیا ہے۔اخبار نے دعویٰ کیا ہے کہ شاہی خاندان کی بااثر شخصیات کو اس لیے گرفتار کیا گیا کیوں کہ وہ ولی عہد کے لیے ممکنہ خطرہ ثابت ہو سکتے تھے۔

بغاوت الزام

مزید : صفحہ اول