علامہ ساجد میر چھٹی مرتبہ مرکزی جمعیت اہل حدیث کے امیر منتخب ہو گئے

علامہ ساجد میر چھٹی مرتبہ مرکزی جمعیت اہل حدیث کے امیر منتخب ہو گئے
علامہ ساجد میر چھٹی مرتبہ مرکزی جمعیت اہل حدیث کے امیر منتخب ہو گئے

  



پھول نگر(ڈیلی پاکستان آن لائن) مر کزی جمعیت اہل حدیث پاکستان کی مجلس شوری کاانتخابی اجلاس مرکز الاصلاح پھول نگر میں منعقد ہوا،جس میں آزادکشمیر، گلگت بلتستان سمیت چاروں صوبوں سے600 ارکان شوری نے شرکت کی،اجلاس میں علامہ ساجد میر کو مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان کا بلامقابلہ امیر،سینیٹر ڈاکٹر حافظ عبدالکریم کو سیکرٹری جنرل جبکہ حاجی عبدالرزاق کو ناظم مالیات منتخب کرلیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق پھول نگر میں ہونے والے اجلاس میں ایک بار پھر علامہ پروفیسر ساجد میر کو مرکزی جمعیت اہل حدیث کا امیر منتخب کر لیا گیا ہے،سینیٹر علامہ ساجدمیر اپنی جماعت کے چھٹی مرتبہ بلامقابلہ امیر منتخب ہوئےجبکہ حافظ عبدالکریم تیسری بار سیکرٹری جنرل کے عہدے پر فائز ہو ئے۔حاجی عبدالرزاق بھی چھٹی مرتبہ ناظم مالیات منتخب ہو ئے۔پروفیسر ساجد میر 2 اکتوبر 1938ء میں سیالکوٹ کے ایک علمی گھرانے میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے گورنمنٹ کالج لاہور سے ایم اے انگلش جبکہ پنجاب یونیورسٹی سے ایم اے اسلامیات، جامعہ ابراہیمیہ سیالکوٹ اور تقویۃ الاسلام شیش محل روڈ لاہور سے فاضل درس نظامی اور وفاق المدارس السلفیہ سے عالمیہ کا کورس کیا۔سیاست سے پہلے انہوں پاکستان سمیت عالمی سطح کے تعلیمی اداروں میں انگلش کے استاد کی حیثیت سے  تدریسی فرائض انجام دیے،وہ کئی سال تک نائجیریا کے تعلیمی اداروں میں بھی بطور پروفیسر خدمات انجام دیتے رہے۔

علامہ ساجد میرپہلی بار1992ءمیں امیرمنتخب ہوئےتھےجبکہ1994سےتاحال ایوان بالا سینیٹ کےممبر بھی چلے آرہے ہیں،وہ پچیس سے زائدعالمی کا نفرنسوں میں شرکت کرچکے ہیں،وہ رابطہ عالم اسلامی کی سپریم کونسل کے رکن بھی ہیں۔تصنیفی میدان میں ان کی کتاب ’عیسائیت، مطالعہ وتجزیہ‘ عالمی شہرت حاصل کرچکی ہے۔ نومنتخب ناظم اعلی ڈاکٹر حافظ عبدالکریم بھی اعلی تعلیم یافتہ ہیں،سعودی عرب کی جامعات سے دینی علوم کی تعلیم کے علاوہ اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور سے انہوں نے اسلامیات کے مضمون میں پی ایچ ڈی کر رکھی ہے،وہ اس وقت سینیٹ کے ممبر کے علاوہ رابطہ عالم اسلامی کی سپریم کونسل کے رکن بھی ہیں۔حافظ عبدالکریم ڈی جی خاں سے ایم این اے بھی منتخب ہوئے تھے اور وہ مواصلات کے وفاقی وزیر بھی رہ چکے ہیں،ان کی رفاہی وسماجی خدمات کا بھی وسیع دائرہ ہے۔   نومنتخب ناظم مالیات حاجی عبدالرزاق لاہورکی سیاسی،سماجی اور کاروباری شخصیت ہیں اور پنجاب اسمبلی کے رکن رہ چکے ہیں۔

علامہ ساجد میر نے ارکان شور ی کی طرف سے ملنے والے مسلسل اعتماد اور انتخاب پر ا نکا شکریہ اداکیا اور اس عزم کا اظہار کیا کہ ملک میں قرآن وسنت کی بالادستی اور جمہوریت کے استحکام کے لیے کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کیا جائے گا،قرآن وسنت کی دعوت گھر گھر پہنچانے کے لیے تنظیم کی مضبوطی کے لیے تمام تر وسائل اور صلاحیتوں کو بروئے کا رلایا جائے گا،علماء اور کارکنوں کی عزت واحترام اور انکے وقار کا رتحفظ کیا جائیگا۔

مرکزی شور ی کے اجلاس میں مختلف قراردادیں بھی منظور کی گئیں جس میں کہا گیا کہ حرمین کے تقدس پر کوئی آنچ نہیں آنے دیں گے، اگر کسی نے بھی حرمین شریفین کی طرف میلی آنکھ اٹھائی تو وہ آنکھیں نکال دی جائیں گی،قرارداد میں واضح کیا گیا کہ کہ سعودی عرب کا دشمن اسلام اور پاکستان کا دشمن ہے،ارضِ حرمین کادفاع پاکستان اور عالم اسلام کا دفاع ہے، پاکستان سعودی عرب کے احسانات کا بدلہ نہیں چکا سکتا، جو لوگ سعودی عرب اور خادمین حرمین شریفین کے درمیان فرق کرتے ہیں وہ اسلام اور حرمین شریفین کے ساتھ مخلص نہیں ہیں۔ دوسری قرارداد میں کہا گیا کہ پاکستان اسلام کے نام پر بنا ہے,کچھ پوشیدہ قوتیں ہمارے خاندانی نظام کو پاش پاش کرنے کی کوشش کر رہی ہیں، سول سوسائٹی کے نام پر کچھ خواتین جن نعروں کے ساتھ سڑکوں پر آئیں وہ قابل مذمت ہے۔قرارداد میں خواتین مارچ کی آڑ میں فحاشی کی  مذمت کرتے ہوئے وفاقی حکومت سے ان پس پردہ قوتوں کو سامنے لاکر ان کے خلاف کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔ پاکستان اسلامی ملک ہے جس میں اسلام سے متصادم قوانین نہیں بن سکتے، یہ مذہب اورآئین پر حملہ ہے۔ ملک کے 98 فیصد لوگ اسلام چاہتے ہیں جبکہ 2 فیصد این جی اوزوالے ہمارے ملک کوہائی جیک کرناچاہتے ہیں جن پر پابندی عائدکی جائے، اسلام اورہماری روایات کے خلاف باتیں جاری ہیں، میراجسم میری مرضی جیسے نعروں کاکیامطلب ہے؟ اگرحکومت ان لوگوں کو نہ روکے گی توپھرہم خود روکیں گے۔

مزید : قومی