امریکی دباؤ قبول نہیں، روس کا کمپنیوں سے اربوں ڈالر کا مطالبہ

امریکی دباؤ قبول نہیں، روس کا کمپنیوں سے اربوں ڈالر کا مطالبہ
امریکی دباؤ قبول نہیں، روس کا کمپنیوں سے اربوں ڈالر کا مطالبہ

  

ماسکو (نیوز ڈیسک ) روس کی طرف سے امریکی پابندیوں کا جواب، نئی قانون سازی کے ذریعے عالمی کریڈٹ کارڈ کمپنیوں کے لئے 3.8 بلین ڈالر کا سکیورٹی ڈیپازٹ جمع کروانا لازم قرار دے دیا گیا۔ ویزا اور ماسٹرکارڈ کمپینوں پر اس قانون کا اطلاق امریکی پابندیوں پر عملدرآمد کرنے کی وجہ سے کیا گیا۔ امریکہ نے یوکرائنی بحران کے ضمن میں روسیا بنک کو روسی حکام کا ذاتی بنک قرار دیتے ہوئے پابندی لگائی تو ویزا اور ماسٹر کارڈ نے 21مارچ سے اس بنک سے اپنا کاروباری تعلق معطل کر دیا۔ اب روس میں کام کرنے والی عالمی کریڈٹ کارڈز کمپنیوں کو نئے قانون کی وجہ سے سخت پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ ویزا کمپنی نے نئے قانون کو غیرمعمولی جبکہ ماسٹرکارڈ نے اس پر عملدرآمد کو بہت مشکل قرار دیا ہے۔ نئے قانون کے مطابق ویزا اور ماسٹر کارڈ کو دو دن کے کاروباری لین دین کے برابر روسی سنٹرل بنک میں سکیورٹی ڈیپازٹ جمع کروانا ہو گا جو 3.8بلین ڈالر بنتا ہے۔ سکیورٹی ڈیپازٹ 8 اقساط میں جمع کروایا جائے گا جس کا آغاز یکم جولائی سے ہوگا۔ قانون کے مطابق روسی صارفین کے لئے ادائیگی کا نظام اگر یک طرفہ طور پر معطل کر دیا جاتا ہے تو روزانہ کے حساب سے سکیورٹی ڈیپازٹ میں سے 10فیصد کٹوتی کی جائے گی۔ اس ضمن میں ویزا کمپنی کے نمائندگان کا کہنا ہے کہ یہ ڈیپازٹ بہت زیادہ ہے لیکن وہ روس سے اس نئے کیس پر بات چیت کریں گے۔ اس بارے میں ایک روسی ساہوکار(بنکر) ولادی میر تیکھونوو کا کہنا ہے کہ انٹرنیشنل پیمنٹ سسٹم (عالمی ادائیگی کا نظام) کوئی نیا قانون نہیں بلکہ آسٹریلیا میں یہ پہلے ہی نافذ کیا جا چکا ہے۔ سکیورٹی ڈیپازٹ کا قانون شہریوں کے حقوق کے تحفظ کے لئے بنایا گیا ہے تاکہ اگر کل ویزا اور ماسٹر کارڈ روس چھوڑ جائیں تو ہمارے شہریوں کا مالی مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے۔

مزید : بزنس