پی آئی اے خسارہ آخری دوحکومتوں کے دور میں ہوا،چیف جسٹس پاکستان

پی آئی اے خسارہ آخری دوحکومتوں کے دور میں ہوا،چیف جسٹس پاکستان
پی آئی اے خسارہ آخری دوحکومتوں کے دور میں ہوا،چیف جسٹس پاکستان

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)پی آئی اے نجکاری کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس دیتے ہوئے چیف جسٹس آف پاکستان کا کہنا ہے کہ پی آئی اے کو خسارہ آخری دوحکومتوں کے دور میں ہوا ،پی آئی اے کا 2008 سے خسارہ بڑھ کر 360 ارب ہو گیا،اس سے پہلے مجموعی خسارہ 73 ارب روپے تھا،جسٹس اعجاز الاحسن کا کہنا ہے کہ پی آئی اے کےلئے پیساکہاں سے آتا ہے،پی آئی اے کو پیسا ٹیکس کاجاتا ہے،ٹیکس کے پیسے کو کھاتے جا رہے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس آف پاکستان کی سربراہی میں 3 رکنی بنچ نے پی آئی اے نجکاری کیس کی سپریم کورٹ میں سماعت کی۔اکانومسٹ فرخ سلیم نے دوران سماعت بتایا کہ 2008 سے 2017 تک پی آئی اے کے 412 ارب کے واجبات ہیں ان کا مزید کہنا ہے کہ گزشتہ 10 سال میں پی آئی اے میں تقرریاں سیاسی بنیادوں پرہوئیںاورنقصان کی وجہ سیاسی اثررسوخ پیکیج اور ایسوسی ایشن پالیسی ہے۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -