سمادھی گنگا رام کے مکین سحرو افطار میں بدبو دار تعفن زدہ پانی پینے پر مجبور

    سمادھی گنگا رام کے مکین سحرو افطار میں بدبو دار تعفن زدہ پانی پینے پر ...

لاہور (سٹی رپورٹر) رمضان المبارک کے مہینے میں سحر و افتار کے اوقات پر سمادھی گنگارام اور اس سے منسلک علاقوں میں رہنے والے گندا اور تعفن زدہ پانی پینے اور استعمال کرنے پر مجبور ہیں۔ جس کے سبب علاقہ کے مکین جگر ، معدے اور جلد سمیت دیگر بیماریوں میں مبتلا ہورہے ہیں اور واسا حکام کو اس ماہ صیام میںبد دعائیں دے رہے ہیں، جبکہ واسا حکام کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگ رہی۔ روزنامہ ”پاکستان“ کی جانب سے کیے گئے سروے کے مطابق پرانا کچا راوی روڈ کا علاقہ سمادھی گنگارام اور اس سے منسلک دیگر علاقے حکومتی بے بسی کی عکاسی کرتے ہیں ۔رمضان المبارک کے مہینے میں ان علاقوں میں رہنے والے مقامی لوگ سحر و افطار کے اوقات میں بدبودارسیوریج ملا پانی استعمال کرنے کے باعث مختلف بیماریوں میں مبتلا ہو رہے ہیں ۔اس حوالے سے روزنامہ ”پاکستان“ کے نمائندہ سے گفتگو کر تے ہوئے سید فہد شاہ،عقیل جٹ،الیاس گلزار و دیگر شہریوں نے واسا حکام کی کارکر دگی پر غم و غصے کا اظہار کر تے ہو ئے کہا کہ گھروں میں آنے والا پانی اتنا گندا اور تعفن زدہ ہے کہ کسی جانور کے پینے کے قابل بھی نہیں ہے ۔ ویسے تو گھروں میں پانی آتا ہی نہیں اور اگر آ بھی جائے تو استعمال کے قابل ہی نہیں ہو تا ۔ متعدد بار واسا حکام کو شکایات کا اندراج کروا چکے ہیں مگر کوئی موثر کاروائی عمل میں نہیں لائی گئی جس سے ہمارے مسائل کا حل نکلے۔ حکومت کو چائیے کہ وہ بڑے بڑے وعدوں کی جگہ بنیادی انسانی حقوق پر توجہ دے اور ہمارے مسائل تر جیحی بنیادوں پر حل کیے جائیں کیونکہ ہمیں واسا سے کو ئی امید نہیں ۔ 

سمادھی گنگا رام

مزید : صفحہ آخر