ریاض نائیکو کی شہادت، مقبوضہ کشمیر میں احتجاجی مظاہرے، بھارتی فورسز کی فائرنگ، نوجوان شہید، کنٹرول لائن پر فائرنگ گولہ باری، 6پاکستانی زخمی

ریاض نائیکو کی شہادت، مقبوضہ کشمیر میں احتجاجی مظاہرے، بھارتی فورسز کی ...

  

سری نگر (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی حکومتی دہشت گردی گزشتہ روز بھی جاری رہی ، حزب المجاہدین کے معروف کمانڈر ریاض نائیکو کی شہادت کیخلاف مظاہروں کے دوران بھارتی فوج نہتے کشمیریوں پر ٹوٹ پڑی، پیلٹ گنوں کا استعمال کیا، فائرنگ سے ایک کشمیری شہید اور متعدد زخمی ہو گئے۔ضلع پلواما میں بھارت کے خلاف بڑے پیمانے پر احتجاجی مظاہرے ہوئے، کشمیری نوجوانوں کی بڑی تعداد نے بھارت کے خلاف اور آزادی کے حق میں نعرے لگائے۔ بھارتی فوج نے پر امن مظاہرین پر پیلٹ گن اور آنسو گیس کے شیل فائر کئے۔شہید کے والد کا کہنا تھا بیٹے کی شہادت ان کے لیے فخر کی بات ہے۔ مقبوضہ وادی میں حریت کانفرنس کے اعلان خلاف ہڑتال رہی۔خیال رہے گزشتہ روز حریت کمانڈر ریاض نائیکو کو ساتھیوں کے ہمراہ ان کے آبائی علاقے بیگ پورہ میں شہید کر دیا گیا تھا۔مقبوضہ کشمیر میں قابض بھارتی انتظامیہ نے حزب المجاہدین کے چیف کمانڈر شہید ریاض احمد نائیکو اور انکے ساتھی شہیدعادل احمد کی نماز جنازہ کے بڑے بڑے اجتماعات کو روکنے کے لیے انکی میتیں لواحقین کے حوالے کرنے کے بجائے خفیہ مقام پر دفنا دیں۔ کشمیر میڈیاسروس کے مطابق بھارتی فوجیوں نے ریاض احمد نائیکو اور عادل احمد کو بدھ کے روز ضلع پلوامہ کے علاقے بیگ پورہ میں محاصرے اور تلاشی کی ایک پر تشدد کارروائی کے دوران شہید کیا تھا۔ قابض فوجیوں نے ضلع پلوامہ ہی کے علاقے شارشالی میں بھی مزید دونوجوان شہید کردیے تھے۔ قابض انتظامیہ نے شہید کمانڈر اور دیگر شہدا کی نماز جنازہ کے بڑے بڑے اجتماعات کے خوف سے ان کے جسد خاکی لواحقین کے حوالے نہیں کیے اور میتوں کی ضلع گاندر بل میں بھارتی فوج کے زیر انتظام قبرستان میں تدفین کر دی۔ ریاض نائیکو اوردیگر کی شہادت پر ضلع پلوامہ کے مختلف علاقوں میں گزشتہ روز لوگو ں نے سڑکوں پر نکل کر زبردست احتجاجی مظاہرے کئے۔۔قابض انتظامیہ نے مظاہروں کو پھیلنے سے روکنے کے لیے وادی میں پابندیاں مزید سخت کر دی ہیں۔ جگہ جگہ بڑی تعداد میں بھارتی فوجی اور پولیس اہلکار تعینات ہیں۔ سڑکوں کو خار دار تاروں سے سیل کر دیا گیا ہے اور لوگوں کی نقل و حرکت پر مکمل طور پر پابندی عائد ہے۔ وادی کے تمام اضلاع میں سی سی ٹی وی کیمروں کے ذریعے لوں کی نقل و حرکت پر کڑی نظر رکھی جا رہی ہے۔ وادی میں فور جی انٹرنیٹ سروس پہلے سے معطل ہے جبکہ گزشتہ رو ز سے ٹو جی سروس بھی معطل کر دی گئی۔ کل جماعتی حریت کانفرنس اور میر واعظ فورم کی آزاد کشمیر شاخوں نے آج اسلام آباد میں اپنے اجلاسوں کے دوران ریاض نائیکو اور دیگر شہداء کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ بھارت قتل عام کے ذریعے کشمیریوں کی تحریک آزادی کو کمزور نہیں کرسکتا۔ سید علی گیلانی کی سربراہی میں قائم کل جماعتی حریت کانفرنس نے رمضان المبارک کے حوالے سے مزاحمتی کلینڈر جاری کر دیا ہے۔ کل جماعتی حریت کانفرنس نے سرینگر مں جاری ایک بیان میں کشمیریوں سے کہا ہے کہ وہ کل اپنے اپنے گاؤں اور شہروں میں شہداء کی غائبانہ نماز جنازہ ادا کریں۔ لوگوں سے یہ بھی کہا گیا کہ وہ اتوار کے روز نماز عشاء کے بعد اپنے گھروں کی چھتوں پر اذان دیں۔ کل جماعتی حریت کانفرنس نے کشمیریوں پر زور دیا کہ وہ 21مئی کو شام آٹھ بجے سے رات نو بجے تک اپنے گھروں کی بتیاں بجھا دیں جسکا مقصد بھارت کو یہ پیغام دینا ہے کہ کشمیری اسکے غیر قانونی قبضے کو تسلیم کرنے کیلئے تیار نہیں ہیں۔ حریت نے 15تا21مئی کے دوران ہفتہ شہداء منانے پر بھی زوردیا جبکہ 21مئی کو مزار شہداء سرینگر کی طرف مارچ کی کال بھی دی گئی ہے۔ دریں اثنامقبوضہ کشمیرکے ضلع پلوامہ میں بھارتی فوجیوں کی فائرنگ سے زخمی ہونے والا ایک نوجوان دم توڑ گیا۔دوسری طرف یورپی یونین نے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی فوری، مکمل اور شفاف تحقیقات پر زور دیا ہے۔ کشمیر میڈیاسروس کے مطابق یورپی یونین کے دفترخارجہ میں علاقائی امور اور جنوبی ایشیاڈویژن کی ہیڈ مس کارولین ونوت نے کشمیر کونسل یوریی پونین کے چیئرمین علی رضا کے کشمیر سے متعلق ایک خط کے جواب لکھا کہ یورپی یونین سمجھتی ہے کہ انسانی حقوق کی بین الاقوامی ذمہ داریوں کے تحت مقبوضہ کشمیرمیں حقوق انسانی کی جامع، فوری اور شفاف تحقیقات ہونی چاہئیں۔انہوں نے لکھا کہ یورپی یونین خطے کی صورتحال کا بغور جائزہ لی رہی ہے او رپاکستان اور بھارت کیساتھ براہ راست رابطے میں ہے۔ انہوں نے لکھا کہ یونین پاکستان اور بھارت کے درمیان مذاکرات کی بحالی اور خطے میں کشیدگی کا خاتمہ چاہتی ہے۔ علی رضا سید نے گذشتہ ماہ یورپی یونین کے وزیرخارجہ جوزف بوریل سمیت یونین کے اعلیٰ حکام کو ایک خط کے ذریعے مقبوضہ کشمیر کی ابتر صورتحال کا سنجیدگی سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیا تھا۔

مقبوضہ کشمیر

راولپنڈی (آئی این پی) بھارت کا جنگی جنون جاری، جنگ بندی معاہدوں کی خلاف ورزیوں سے باز نہ آیا، بھارتی فوج نے ایل اوسی کے نیزہ پیر اور رکھ چکری کے قریب شہری آبادی کو جان کر نشانہ بنایا، بھاری مارٹر گولوں، آرٹلری اور خودکار ہتھیاروں سے فائرنگ کے نتیجے میں 3لڑکیوں اور خاتون سمیت 6فراد شدید زخمی ہوگئے، جنہیں فوری طبی امداد کے لئے قریبی ہسپتال منتقل کردیاگیا۔ فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق بھارتی فوج نے کنٹرول لائن کے نیزہ پیر اور رکھ چکری سیکٹر شہری آبادی کو جان بوجھ کر نشانہ بنایا او ر جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورز ی کرتے ہوئے بھاری مارٹر گولوں، آرٹلری اور خودکار ہتھیاروں سے بلا اشتعال فائرنگ کی ۔ آئی ایس پی آر کے مطابق اندھا دھند فائرنگ کے نتیجے میں کرنی دیگوار نار اور مندھر گاؤں میں 6افراد شدید زخمی ہوگئے۔جن میں تین لڑکیاں اورایک خاتون بھی شامل ہے۔زخمیوں کو ضروری طبی امداد کیلئے قریبی ہیلتھ فسیلٹی منتقل کردیاگیا ہے۔ادھر میڈیا رپورٹس کے مطابق بھارت نے ایل او سی پر اپنی جارحیت جارہی رکھتے ہوئے کھوئی رٹہ سیکٹر پر بھی بھارتی افواج کی سویلین آبادی پر بلااشتعال فائرنگ اور گولہ باری کی۔بھارتی افواج کی کھوئی رٹہ سیکٹر پر ایک بار پھر خلاف ورزی کرتے ہوے لائن آف کنٹرول کے ملحقہ گاؤں ہوئے ٹایئں، کینھٹی،چتر گجر موڑا میں رات گئے تک فائرنگ اور گولا باری کا سلسلہ جاری رکھا جس سے لوگوں کے املاک کو نقصان پہنچا تاہم کوئی جانی نقصان نہیں ہوا پاک افواج نے دشمن کی اسی زبان کی طرح جواب دیا زبردست جوابی کارروائی کرتے ہوئے دشمن کی توپوں کا منہ بند کر دیا لوگوں نے پاک افواج کے حق میں نعرے بلند کی ہے دشمن کو کاری ضرب دینے پر لوگوں نے افواج پاکستان کو خراج تحسین پیش کیا۔

ایل او سی

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر،این این آئی)پاکستان نے ایک بار پھر کہا ہے کہ بھارت کے زیر قبضہ جموں وکشمیر میں بھارتی قابض فوج کے ہاتھوں ظالمانہ اور پرتشدد کارروائیوں کے نتیجے میں مسلسل بگڑتی صورتحال انتہائی تشویشناک امر ہے،نام نہاد ”مقابلے“ میں ایک اور مقامی کشمیری حریت پسند کو شہید کرنے کے بعد قابض بھارتی افواج نے مقبوضہ جموں وکشمیر میں انٹرنیٹ سروسز مکمل طورپر بند کردی ہیں،بھارتی بہیمانہ ظلم وبربریت کی ہم شدید مذمت کرتے ہیں، بھارت طاقت کے زور پر کشمیریوں کی اپنی اور مقامی مزاحمتی تحریک کچل نہیں سکتا اور نہ ہی ان کے عزم وہمت اور استقامت کو متزلزل کرسکتا ہے، بھارت کے زیرقبضہ جموں وکشمیر میں تیز ہوتی مزاحمت کشمیریوں پربھارت کے سفاکانہ ظلم وجبر اور استبداد کا براہ راست ردعمل ہے، عالمی برادری صورتحال کا نوٹس لے کر بھارت کو غیرقانونی اقدامات سے روکے اور بھارت کا محاسبہ کرے۔ جمعرات کو ترجمان دفتر خارجہ عائشہ فاروقی نے اپنے بیان میں کہاکہ بھارت کے زیر قبضہ جموں وکشمیر میں کورونا وائرس سے متاثرین کی تعداد میں اضافے کے باوجود بھارتی قابض افواج کشمیری عوام کے خلاف جبر وتشدد کی لامتناہی مہم شروع کئے ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہاہ بے گناہ کشمیری جعلی مقابلوں، چھاپوں اور گھر گھر تلاشی کی آڑ میں شہید کئے جارہے ہیں،غیرانسانی رویہ اختیار کرتے ہوئے شہداء کے جسد خاکی بھی ان کے خاندان کو واپس نہیں کئے جارہے، ہزاروں کشمیری مرد، عورتیں اور بچے بھارتی جبرواستبداد کے خلاف سراپا احتجاج ہیں تاکہ دنیا کو معلوم ہو کہ وہ بھارت کے غیر قانونی قبضے کو مسترد کرتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ نام نہاد ”مقابلے“ میں ایک اور مقامی کشمیری حریت پسند کو شہید کرنے کے بعد گزشتہ دن سے قابض بھارتی افواج نے مقبوضہ جموں وکشمیر میں انٹرنیٹ سروسز مکمل طورپر بند کردی ہیں۔ اطلاعات ہیں کہ بھارتی فوج نے پرامن احتجاج کرنے والوں پر فائرنگ کی اور پیلٹ گنز کانشانہ بنایا جس سے کم ازکم ایک بے گناہ کشمیری شہید اور متعدد زخمی ہوئے۔ بھارتی بہیمانہ ظلم وبربریت کی ہم شدید مذمت کرتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ بھارت کو سمجھنا ہوگا کہ وہ طاقت کے زور پر کشمیریوں کی اپنی اور مقامی مزاحمتی تحریک کچل نہیں سکتا اور نہ ہی ان کے عزم وہمت اور استقامت کو متزلزل کرسکتا ہے۔ بھارت کے زیرقبضہ جموں وکشمیر میں تیز ہوتی مزاحمت کشمیریوں پربھارت کے سفاکانہ ظلم وجبر اور استبداد کا براہ راست ردعمل ہے۔ انہوں نے کہاکہ ہم ایک بار پھر ”دراندازی“ کے بے بنیاد بھارتی الزامات مسترد کرتے ہیں جن کا مقصد بھارت کے زیر قبضہ جموں وکشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین ترین پامالیوں سے دنیا کی توجہ ہٹانا اور کسی ممکنہ ”فالس فلیگ“ آپریشن کے لئے ایک بہانہ تراشنا ہے، ایسے کسی بھی ممکنہ بھارتی اقدام کے بارے میں ہم مسلسل عالمی برادری کو آگاہ کرتے آرہے ہیں۔ ہم نے بھارت پرہمیشہ زور دیا ہے کہ وہ ایسی کسی بھی حماقت اور غیرذمہ دارانہ حرکت سے باز رہے کیونکہ اس کے خطے کے امن وسلامتی پر انتہائی تباہ کن اثرات مرتب ہوں گے۔ انہوں نے کہاکہ ہم ایک بار پھر عالمی برادری پر زور دیتے ہیں کہ وہ صورتحال کا نوٹس لے کر بھارت کو غیرقانونی اقدامات سے روکے اور بھارت کا محاسبہ کرے جن سے جنوبی ایشیاء کے امن وسلامتی کو شدید خطرات لاحق ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ہم عالمی برادری پر زور دیتے ہیں کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرار دادوں اور کشمیری عوام کی خواہشات کے مطابق جموں وکشمیر کے تنازعہ کے پرامن حل کو یقینی بنانے کے لئے مل کر کام کرے۔

ترجمان دفتر خارجہ

مزید :

صفحہ اول -