بااثر افراد کا قبرستان پر ہل چلا کر قبضہ‘ اہل علاقہ کا شدید احتجاج

  بااثر افراد کا قبرستان پر ہل چلا کر قبضہ‘ اہل علاقہ کا شدید احتجاج

  

خانیوال(نما ئندہ پاکستان،نامہ نگار)با اثر افراد نے عیسا ئیوں کے سو سا لہ پر انے قبر ستا ن پر ہل چلا کر قبضہ کر لیا درجن سے زائد قبریں مسمار اہل علاقہ سمیت سول سوسائٹی سمیت سما جی و فلاحی حلقوں سراپا احتجاج اربا ب اختیار سے نو ٹس لیکر قبرستان کی جگہ وہ گزار(بقیہ نمبر39صفحہ6پر)

کروانے اور کا روائی کر نے کا مطا لبہ۔تفصیل کے مطا بق نواحی علاقہ 174/10Rٰؑعیسا ئیو ں والاجس میں سو سا لہ قبل عیسا ئیوں نے اپنے قبر ستا ن کی بنیاد رکھی اور بعد از رقبہ مالک سے جگہ بارہ کنال خرید کر قبرستان کے لیے وقف کر دی گئی جس میں عیسا ئی آج تک اپنے فوت شدکان کی تدفین کر رہے ہیں با اثر ظفر نو نا ری نامی قبضہ ما فیا نے اپنے سا تھیوں سے مل کر اس میں ہل چلا کر قبضہ کر لیا بلکہ اس کے ملحقہ بقایا بنا م سر کا ر رقبہ اور چک میں واقع گرلز گور نمنٹ سکول کے پلے گرراؤنڈ پر بھی پا نی لگا کر فصل کا شت کر دی قبضہ ما فیا کے با اثر ہو نے کی وجہ سے قانو ن بھی حر کت میں نا آیاجس کے خلاف اہل علاقہ جن میں ممبر ضلع کونسل افضل خورشید،ممبر یو سی کو نسل نسیم اختر،طا رق،شہبا ز گل،چوہدری بخشیش،چوہدری آصف، ابی نذر مسیح،ویلسن مسیحِ،سرفراز مسیح،سمسن مسیح،دلبا غ لطیف مسیح،افتخار گلزارمسیح،چوہدری ممتازمسیح،شوکت پاسٹر،ندیم پاسٹر،سموئل شاہدپاسٹر،عاشر ممتاز سمیت اہل علاقہ کی کثیر تعداد نے میڈیا کے نما ئندگان کو بتا یا کہ ہمارا چک تقریباایک سو سولہ سا ل پرانا ہیں جو کہ تین ہزار کی آبا دی پر مشتمل ہیں ہم لو گ تما مذہب کے لو گوں اور ان کی عبادت گاہوں اور قبرستان کا احترام کرتے ہیں لیکن با اثر قبضہ ما فیا کے سر غنہ ظفر نو نا ری نے ہما رے آبا ئی قبرستان پر ہل چلا کر ہمارے آباؤ اجداد کی قبر یں مسمار کر کے جگہ پر قبضہ کر کے ہما رے جذ با ت کو مجروح کیا اور سا تھ ہی گو رنمنٹ گرلز سکو ل کے پلے گرراؤنڈ اور ملحقہ بقایا بنا م سر کا ر رقبہ پر بھی قبضہ کرلیا جس پر ہم شدید سراپا احتجاج ہیں با اثر قبضہ ما فیاکی غنڈہ گردی کے خلاف مسیح برادری سمیت سول سوسا ئٹی سماجی وفلاحی حلقوں سمیت اہل علاقہ نے بھی شدید احتجاج کر تے ہوئے وزیراعلی پنجاب وزیراقلیتی امور سمیت ڈی سی خا نیوال سے مطا لبہ کیا کہ قر ستان کی جگہ کو فیالفورقبضہ مافیا سے وہ گزار کروایا جا ئے اور قانو نی کا روائی عمل میں لا ئی جا ئے۔

قبضہ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -