اینٹنسو کلچر سسٹم کو اپنانے کی منصوبہ بندی کررہے ہیں‘ ڈی جی ماہی پروری

اینٹنسو کلچر سسٹم کو اپنانے کی منصوبہ بندی کررہے ہیں‘ ڈی جی ماہی پروری

  

لاہور( اپنے خبر نگار سے )ڈائریکٹر جنرل ماہی پروری ڈاکٹر محمد ایوب نے کہا ہے کہ پبلک سیکٹر کی17بڑی ہیچریاں اور ضلع کی سطح پر 30سے زائد چھوٹے نرسری یونٹ پرائیویٹ سیکٹر کے9000فش فارمز کو9کروڑ30لاکھ بچہ مچھلی فراہم کرتے ہیں جہاں سے مچھلی کی 92000میٹرک ٹن سالانہ پیداوار حاصل ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ ماہی پروری کی ہیچریوں میں تیار کی جانے والی بچہ مچھلی نہ صرف پرائیوٹ فش فارمرز بلکہ صوبہ سندھ، بلوچستان اور خیبرپختونخوا کو بھی سپلائی کی جاتی ہے ۔ انہوں نے یہ بات اپنے دفتر میں ملاقات کے لیے آنے والے ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے بتائی ۔ انہوں نے کہا کہ پانی کے محدود وسائل کے پیش نظر محکمہ ماہی پروری پنجاب بھی باقی دنیا کی طرح اینٹنسو کلچر(Intensive Culture) سسٹم کو اپنانے کی منصوبہ بندی کررہے ہیں تاکہ کم سے کم پانی سے مچھلی کی زیادہ سے زیادہ پیدوار حاصل کی جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ ماہی پروری فش فارمرز کو کروائے جانے والے خوشحالی بذریعہ فش فارمنگ کورسز میں اسی طریقہ کار بارے معلومات و ہدایات فراہم کرتاہے کہ وہ کنٹرولڈ کنڈیشنز میں پانی میں مصنوعی طریقے سے آکسیجن کی زیادہ مقدار شامل کر کے اورموزوں درجہ حرارت قائم رکھ کر فش فیڈ کے ذریعے کس طرح اس کی مصنوعی نسل کشی کر کے زیادہ پیداوار حاصل کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ ماہی پروری کی مسلسل کوششوں وجدوجہد سے پرائیویٹ سیکٹر میں مچھلی کی مصنوعی نسل کشی کا طریقہ کار منتقل ہونے سے بے شمار ہیچریاں وجود میںآئیں جس کے باعث بچہ مچھلی کی ضروریات پورا ہونے کے ساتھ روزگار کے مواقع بھی میسر آئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے ذریعے جنوبی پنجاب میں ایکسپورٹ پروسسینگ زون قائم کرنے کے لیے بھرپور کوششیں کی جارہی ہیں جو مچھلی کی برآمد اورزرمبادلہ میں اضافے کا باعث بنے گا۔

ڈٖائریکٹر جنرل ماہی پروری ڈاکٹر محمد ایوب نے کہا کہ فشریز سیکٹر کی ترقی اور لوگوں کو اس نفع بخش صنعت کی طرف راغب کرنے کے لیے خوشحالی بذریعہ فش فارمنگ زیبائشی مچھلیوں کی افزائش اور ایکوریم سازی کے کورسز کے شرکاء کو دوران تربیت اعزازیہ دینے کی تجویز بھی زیر غور ہے اور اس ضمن میں اعلیٰ حکام سے منظوری حاصل کی جارہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ پنجاب کے وژن کے مطابق ماہی پروری کے شعبہ کو ترقی دینے اور اس شعبہ سے منسلک لوگوں کو خوشحال بنانے کے لیے ایک جامع پروگرام پر عمل کیا جارہاہے۔ انہوں نے کہا کہ فش فارمنگ کے حوالے سے کروائے جانے والے کورسز کے ذریعے تربیت حاصل کرنے والے ماہی پروری کے جدید طریقوں سے آشنا ہو کر اپنی معاشی حالت کو مزید بہتر بنارہے ہیں۔

مزید :

کامرس -