کراچی ، مسلم لیگ( ن) کا دھاندلی اور خیر پور واقعہ کے خلاف دھرنا

کراچی ، مسلم لیگ( ن) کا دھاندلی اور خیر پور واقعہ کے خلاف دھرنا

کراچی (اسٹاف رپورٹر)پاکستان مسلم لیگ( ن)سندھ اور سندھ یونائیٹڈ پارٹی کی جانب سے ہفتہ کوسندھ میں بلدیاتی انتخابات کے پہلے مرحلے میں دھاندلی اور خیر پور واقعہ کے خلاف الیکشن کمیشن سندھ کے دفتر کے باہر احتجاجی مظاہرہ اور دھرنا دیاگیا۔ احتجاجی مظاہرے کی قیادت مسلم لیگ( ن) سندھ کے صدر اسماعیل راہو، جنرل سیکرٹری سنیٹر نہال ہاشمی،سیکرٹری اطلاعات محمد اسلم ابڑو،کراچی کے جنرل سیکرٹری خواجہ طارق نذیر، عرفان اللہ مروت اور رکن سندھ اسمبلی ہمایوں خان نے کی ۔دھرنے میں مسلم لیگ(ن) اور سندھ یو نائیٹڈ پارٹی کے کارکنوں کی ایک کثیرتعداد نے شرکت کی۔مظاہرے کے شرکاء نے پلے کارڈز اور بینرز اٹھارکھے تھے ۔ جن پر لاٹھی گولی کی سرکار نہیں چلے گی،الیکشن کمیشن نا منظورسمیت دیگرنعرے درج تھے ۔مظاہرہ اور دھرنا تقریباً دو گھنٹے تک جاری رہا اس دوران صوبائی الیکشن کمشنرتنویر ذکی الیکشن کمیشن کے دفتر سے باہر آئے اور انھوں نے مسلم لیگ( ن) سندھ کے صدر اسماعیل راہو ،سنیٹرنہال ہاشمی ،اسلم ابڑوسمیت دیگررہنماؤں سے ملاقات کی ۔مسلم لیگی رہنماؤں نے انھیں دھاندلی کے تصاویری ثبوت ،جعلی شناختی کارڈز پیش کیئے۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ دوسرے اور تیسرے مرحلے میں عدلیہ، فوج اور رینجرز کی نگرانی میں انتخابات کرائے جائیں۔پولنگ اسٹیشنوں کے اندر اور باہر فوج اور رینجرز کے جوان موجود ہونے چاہئے۔قبل ازیں مسلم لیگ (ن) سندھ کے صدراسماعیل راہو نے میڈیاسے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ مسلم لیگ( ن) نے پہلے مرحلے کے انتخابات سے قبل خدشہ ظاہر کیا تھا کہ سندھ میں دھاندلی اور خونریزی کی منصوبہ بندی کی جارہی ہے اس لئے فوج اور رینجرز کی نگرانی میں انتخابات کرائے جائیں اگر ہمارے اس مطالبے پر عمل کر لیا جاتا تو خیر پور میں اتنا بڑا سانحہ پیش نہ آتا۔انھوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی الیکشن کو ہائی جیک کرنا چاہتی ہے الیکشن کمیشن اسے ہائی جیک ہونے سے بچائے اور اپنا کردار ادا کرے۔پیپلز پارٹی نے جو حکومتی مشینری کا استعمال کیا اس کو نوٹس لیا جائے اوربلدیاتی انتخابات کے دوسرے اور تیسرے مرحلے میں فوج اور رینجرز کے جوانوں کو پولنگ اسٹیشنوں کے اندر اور باہر تعینات کیا جائے۔ مسلم لیگ ن سندھ کے جنرل سیکرٹری سنیٹر نہال ہاشمی نے کہا کہ ہمیں خدشہ ہے کہ اگر بلدیاتی انتخابات کے دوسرے اور تیسرے مرحلے میں فوج اور رینجرز کو تعینات نہیں کیا گیا تو جو کچھ پہلے ہوا ہے آئندہ بھی یہی ہوگا، اس سلسلے میں الیکشن کمیشن اپنی ذمہ داری پوری کرے۔انہوں نے کہاکہ پیپلز پارٹی مقابلہ کرکے الیکشن جیتے قتل و غارتگری کے ذریعے الیکشن جیتنے کی کوشش نہ کرے۔انھوں نے کہا کہ یہاں جو لوگ آئے ہیں وہ مطالبہ کر رہے ہیں کہ انتخابات میں دھاندلی ہوئی ہے یہ پورے سندھ کی آواز ہے۔انھوں نے کہا کہ یہ بات انتہائی قابل مذمت ہے کہ پہلے مرحلے کے انتخابات میں وزیر اعلی سندھ کے خاندان کے افراد ٹھپے لگاتے نظرآئے ۔انھوں نے کہا کہ ہمارا یہ بھی مطالبہ ہے کہ باقی دو مرحلوں کے انتخابات 2013کے انتخابات کی اسکیم کے تحت کروائے جائیں۔اسلم ابڑو نے کہا کہ جیکب آباد میں12000خواتین کے ایسے شناختی کارڈزملے ہیں، جن پرتاریخ پیدائش ایک مہینے کی ہے جبکہ ان پرمستقل پتہ بھی درج نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ 300،300 بیلٹ پیپرز ڈپٹی کمشنر نے ٹھپے لگا کر انتخابات سے ایک رات قبل ہی تقسیم کئیے تھے جبکہ ہمارے پولنگ ایجنٹوں کو بھی انتخابی نتائج سے قبل پولنگ بوتھوں سے باہر نکال دیاگیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ انتخابات کی صبح الیکشن کا عملہ اور پولنگ اسٹیشن بھی تبدیل کردیئے گئے جبکہ انتخابی سامان بھی الیکشن کمیشن کے عملے کو دینے کے بجائے رکن قومی اسمبلی اعجاز جھکرانی کے حوالے کیا گیا۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ بلدیاتی انتخابات دوبارہ عدلیہ کی نگرانی میں کرائے جائیں۔اسلم ابڑونے کہاکہ جیکب آباد میں ہونے والی دھاندلی کے کچھ ثبوت الیکشن کمیشن کو فراہم کردیئے ہیں پیر کو الیکشن کمیشن میں دھاندلی کے مکمل ثبوت جمع کرادیئے جائیں گے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر