ریاست مدینہ بنانے کیلئے سیرت طیبہ کو اپنا نا ہوگا، علامہ محسن چشتی

ریاست مدینہ بنانے کیلئے سیرت طیبہ کو اپنا نا ہوگا، علامہ محسن چشتی

  



رحیم یارخان(بیورو رپورٹ)مرکزی انجمن میلاد النبیؐ میلاد چوک (رجسٹرڈ) کے زیر اہتمام ربیع الاول کے 60ویں بارہ روزہ تقریبات کے آٹھویں روز منعقد محفل میلاد کی صدارت ممتاز صنعت کار حاجی غلام کبریا نے کی جبکہ پاکستان تحریک انصاف کے ایم این اے چودھری جاوید اقبال وڑائچ مہمان خصوصی تھے۔ مہمان خطیب علامہ محسن شہزاد چشتی  نے سیرت النبیؐ کے حوالے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ  حضرت محمد مصطفیؐ کی تکریم و تعظیم مسلم امہ کا فرض ہے۔ آپؐ دونوں جہانوں کے لئے باعث(بقیہ نمبر40صفحہ7پر)

 رحمت اور وجہ تخلیق کائنات ہیں۔ آپؐ کا اسوہ حسنہ ہمارے لئے مشعل راہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے پرامن معاشرے اور ریاست مدینہ بنانے کے لئے حضور اکرمؐ کی سیرت طیبہ کو اپنانا ہوگا۔ اسلامی تعلیمات اور سیرت سرور کونینؐ سے دوری کے باعث آج مسلمان دنیا میں اجتماعی طور پر مسائل کا شکار ہیں۔ حضور اکرمؐ کی بعثت کا مقصد دنیا سے اندھیروں کا خاتمہ اور انسانیت کی فلاح و بہبود ہے۔ موجودہ دور میں مسلمانوں کی بڑی کمزوری ہے کہ ہم سرکار دو جہانؐ سے محبت کے دعوے کرتے ہیں مگر زندگی سیرت مبارکہ کے مطابق بسر نہیں کررہے۔ انہوں نے کہا کہ اسلامی معاشرے کی تشکیل کے لئے ضروری ہے کہ مسلم امہ یکجان اور ایک قوم ہوکر باطل قوتوں کی سازشوں کا منہ توڑ جواب دیں۔ آپؐ کی سنتوں کی پیروی ہماری بخشش و نجات کا ذریعہ ہے۔ آپؐ دنیا میں آمد سے جہالت اور مایوسی کے اندھیرے چھٹ گئے‘ ہر طرف امن و محبت‘ بھائی چارے اور روشنی کی شمع روشن ہوگئیں۔ آپؐ سراپا رحمت ہے‘ آپؐ کی تشریف آوری سے توحید کا بول بالا ہوا۔ انہوں نے کہا کہ مقام مصطفیؐ صرف ربیع الاول کے مہینے میں ہی نہیں بلکہ پورا سال بیان کرنا چاہیئے۔ دین سے دوری کی وجہ سے مسلم امہ مسائل اور مشکلات سے دوچار ہے۔ غیر مسلم قوتوں کے ہاتھوں مسلمان انسانیت سوز مظالم کا شکار ہیں۔ آپؐکے اسوہ حسنہ پر عمل کرکے ان مسائل سے نجات مل سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ آپؐ کی ذات اقدس حسن جمال‘ زہد و تقوی‘ علم و فضل‘ شرافت و لیاقت‘ شجاعت و سخاوت‘ دیانت و امانت اور تہذیب و شائستگی کا پیکر تھی۔ اللہ تعالی نے آپؐ کو ایسا بے مثل و بے مثال بنایا اور سانچے میں ڈھالا جس کا تصور بھی ناممکن ہے۔ آپؐ نے علم و نور کی ایسی شمعیں روشن کیں جس میں عرب جیسے علم و تہذیب سے عاری معاشرے میں جہالت کے اندھیروں کو ختم کرکے اسے دنیا کا تہذیب یافتہ معاشرہ بنایا۔ آپؐ نے اپنی تعلیمات میں امن و اخوت‘ بھائی چارے‘ اتحاد و یکجہتی اور برداشت کا درس دیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم میلاد شریف مناکر دنیا کو امن کا درس دیتے ہیں کیونکہ ہمارے پیارے آقاؐ نے امن کا پیغام دیا۔ میلاد منانے والے پرامن اور وطن سے محبت کرنے والے لوگ ہیں۔ علامہ محمد آصف سعیدی  نے کہا کہ آج بھی امت مسلمہ آپؐ کی تعلیمات کو اوڑھنا بچھونا بنا کر دنیاوی اور اخروی کامیابیاں حاصل کرسکتی ہے۔ ہمیں چاہیئے کہ نہ صرف ہم بلکہ اپنے بچوں کو بھی اسلامی معاشرت اور اسلامی تعلیمات سے بہرہ ور کریں  تاکہ وہ بھی معاشرے کے کامیاب شہری بن سکیں۔ محفل میلاد کا آغاز قاری احمد نواز سعیدی  نے تلاوت قرآن پاک سے کیا جبکہ ثناء خواں حافظ شاہ محمد سعیدی‘ صوفی اشفاق احمد سلطانی‘ کاشف مجیدی و دیگر  نے بارگاہ رسالتؐ میں گلہائے عقیدت پیش کرنے کی سعادت حاصل کی۔ محفل میلاد میں انجمن آڑھتیان غلہ منڈی کے صدر چودھری انوار احمد نجمی‘ عباس بھٹی اویسی‘ حافظ محمد اکرم سعیدی‘ علامہ قاری محمد انور سعیدی‘ قاری محمد یار سعیدی‘ شاہ محمد سعیدی‘ مرکزی انجمن میلاد النبیؐ کے چیئرمین حاجی محمد نواز اختر‘ صدر محمد اسلم جلال‘ خلیل احمد مغل‘ حافظ محمد الیاس سعیدی‘سجاد سرور‘ خالد سلطان‘ محبوب خالق‘  عامر خان ترین‘ میاں ناصر محمود‘ مولانا ندیم سعیدی‘ مولانا محمد سلیم سعیدی‘ ملک خدا بخش سعیدی‘  عاشق حسین‘ حسن شاہ‘ ودیگر عاشقان رسولؐ نے شرکت کی۔ محفل میلاد کا اختتام درود و سلام‘ آزادی کشمیر اور ملکی سلامتی اور افواج پاکستان کی خدمات کو خراج تحسین کی خصوصی دعا سے ہوا۔

محسن چشتی

مزید : ملتان صفحہ آخر