سائلین خوار، 223ایمپلائز کریکٹر سرٹیفکیٹس کی ویری فیکشن نہ ہوسکی

سائلین خوار، 223ایمپلائز کریکٹر سرٹیفکیٹس کی ویری فیکشن نہ ہوسکی

  



ملتان (وقا ئع نگار) پاکستان تحریک انصاف کی حکومت بھی پولیس کا روایتی کلچر تبدیل نہ کرسکی۔ضلع بھر کے تھانوں میں سائلین معمولی سے معمولی کام کیلئے بدستور دھکے کھانے پر آج بھی مجبور نظر آرہے ہیں۔جبکہ شہریوں کے (223) ایمپلائیز اور کریکٹر سرٹیفیکیٹس تھانوں میں ویری فیکیشن کے نام پر کاغذوں میں دفن پڑے ہیں۔اور متعلقہ تھانہ ٹس سے مس نہیں ہو رہا ہے۔ باوثوق ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ موجودہ حکومت نے ملک بھر میں پولیس کلچر کی تبدیلی کا نعرہ لگایا تھا۔جوتاحال کوئی خاطر خواہ نتائج نہ دے (بقیہ نمبر14صفحہ12پر )

سکا ہے۔جس کی وجہ سے شہری معمولی سے معمولی کام کیلئے آج بھی تھانوں کے اندر چکر لگاتے لگاتے دھک جاتے ہیں۔مگر نتیجہ وہی صفر رہتا ہے۔ ذرائع کے مزید مطابق ملتان کے خدمت مرکز کی طرف سے تھانوں میں بھیجے جانے والے 223 کریکٹر اور ایمپلائیز سرٹیفیکیٹس کی ویری فیکیشن رپورٹ تیار نہ ہونے پر شہری پریشان ہیں۔ایسا لگتا ہے جیسے مذکورہ رپورٹس پولیس کے روایتی کلچر کی نظر ہو چکی ہیں۔اور یہی وہ وجہ ہے کہ شہریوں کے کریکٹر اور ایمپلائز سرٹیفیکیٹس تاحال صرف صرف کاغذوں میں دفن ہیں۔متعلقہ تھانے عوام کو ریلیف دینے کی بجائے تنگ کرنے میں لگا ہوا ہے۔ شہریوں نے پولیس کے ریجنل اور صوبائی پولیس افسران سے مذکورہ صورت حال پر فوری طور نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔

سرٹیفکیٹ

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...