تخلیقی صلاحیتیں رکھنے والے طلبہ مادری زبانوں کو بھی فروغ دیں،مختار عزمی

تخلیقی صلاحیتیں رکھنے والے طلبہ مادری زبانوں کو بھی فروغ دیں،مختار عزمی

  



لاہور(سٹی رپورٹر) منہا ج یونیورسٹی شعبہ اردو کے سربراہ پروفیسر ڈاکٹر مختار احمد عزمی نے کہا کہ تخلیقی صلاحیتیں رکھنے والے طلبہ اردو کے ساتھ ساتھ اپنی مادری زبانوں پنجابی، سرائیکی، سندھی، بلوچی اور پشتو میں بھی طبع آزمائی کرکے معیاری ادب کی تخلیق کا باعث بنیں۔ منہاج یونیورسٹی کے شعبہ اردو میں ایم فل اردو کے نئے آنیوالے سکالرز کے اعزاز میں دیے گئے استقبالیہ سے خطاب کرتے ہوئے پروفیسر ڈاکٹر مختار احمد عزمی کا کہنا تھا کہ اردو ہماری قومی زبان ہے جو ہمیں جان سے پیاری ہے جبکہ پنجابی، سرائیکی، بلوچی، بروہی، سندھی اور پشتو ہماری علاقائی زبانیں جو ایک خوبصورت گلدستے کی مانند ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ادب کے طلبہ کے لئے ضروری ہے کہ وہ اردو میں شاعری، ناول اوردیگر اصناف نثر میں طبع آزمائی کرنے کے ساتھ ساتھ اپنی مقامی اور علاقائی زبانوں میں بھی تخلیقی کاوشیں کریں تاکہ مقامی زبانیں بھی زمانہ جدید میں معیاری ادب پیدا کرنے کی دوڑ میں شامل ہوسکیں۔پروفیسر ڈاکٹر مختار احمد عزمی کا کہنا تھا کہ ایسا کرنے سے جہاں مقامی زبانوں میں معیاری ادب پیدا ہوگا، وہاں طلبہ کی اردو میں ادب پیدا کرنے کی تخلیقی صلاحیت مزید نکھر جائے گی کیونکہ انسا ن اپنی مادری زبان میں جس طرح اظہار کی قوت پر قادر ہوتاہے اس طرح کسی اور زبان میں نہیں ہوتاجب طلبہ کو اپنی مادری زبان میں ادب تخلیق کرنے پر قدر ت حاصل ہوجائے گی تو اس کا خوشگوار اثر ان کے اردو میں تخلیق کردہ ادب بھی پڑے گا جس کا ہماری قومی زبان کو بیش بہا فائدہ پہنچے گا۔

مزید : میٹروپولیٹن 1