والدین بچوں کو نمونیے سے بچانے کے لیے ویکسین لگوائیں، ماہرین

والدین بچوں کو نمونیے سے بچانے کے لیے ویکسین لگوائیں، ماہرین

  



کراچی(اسٹاف رپورٹر) ماہرین امراض اطفال نے 12 نومبر کو ورلڈ نمونیا ڈے کے حوالے سے بریفنگ میں کہا ہے کہ والدین کو چاہیے کہ وہ اپنے بچوں کو ویکسین لگوائیں۔ پاکستان میں سالانہ 92 ہزار پانچ سال سے چھوٹے بچے نمونیا کے باعث انتقال کر جاتے ہیں۔ ڈاکٹر جمال رضا، ڈائریکٹر آف نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف چائلڈ ہیلتھ(NICH)، پروفیسر، ڈاکٹر جلال اکبر، پریزیڈنٹ الیکٹ، پاکستان، پیڈیاٹرک ایسوسی ایشن (پی پی اے)، سندھ، ڈاکٹر غلام رسول، صدر پی پی اے سندھ اور ڈاکٹر محمد خالد شفیع، جنرل سیکریٹری، پاکستان، پیڈیاٹرک ایسوسی ایشن (پی پی اے)، سندھ اور ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاؤ یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز نے میڈیا کو بریف کیا۔انہوں نے کہا کہ پینے کے صاف پانی کے علاوہ صرف ویکسین ہی وبائی بیماریوں سے بچانے میں معاون ہے لیکن اس کے باوجود والدین اپنے بچوں کو نمونیا سے بچاؤ کی ویکسین نہیں لگواتے۔ اگر بچوں کی ویکسینیشن کرائی جائے تو ان اموات پر قابو پایا جاسکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ نمونیا نظام تنفس میں شدید نوعیت کا انفیکشن ہوتا ہے جس سے پھیپھڑے متاثر ہوجاتے ہیں اورسانس لینے میں شدید تکلیف اور دشواری کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ بالخصوص 5 سال سے کم عمر بچوں پر کپکپی، بے پوشی، ہائیپو تھرمیا اور غنودگی طاری ہوجاتی ہے اور دودھ پینے میں بھی دشواری ہوتی ہے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر /میٹروپولیٹن 4