دھرنے سے کوئی جائز فائدہ اٹھاتا ہے تو کوئی خفگی نہیں،دھاندلی سے آنے والوں کوحکومت نہیں  کرنےدیںگے:مولانا فضل الرحمان

دھرنے سے کوئی جائز فائدہ اٹھاتا ہے تو کوئی خفگی نہیں،دھاندلی سے آنے والوں ...
دھرنے سے کوئی جائز فائدہ اٹھاتا ہے تو کوئی خفگی نہیں،دھاندلی سے آنے والوں کوحکومت نہیں  کرنےدیںگے:مولانا فضل الرحمان

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) جمعیت علمائے اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ اگر دھرنے سے کوئی جائز فائدہ اٹھاتا ہے تو مجھے اس پر کوئی خفگی نہیں،موجودہ حکومت کوقبضہ گروپ سمجھتے ہیں،عمران خان امریکہ میں بھی ہمیں گالیاں دیتےرہے،دھاندلی سے آنے والوں کوحکومت نہیں  کرنے دیں گے۔

نجی ٹی وی سےخصوصی گفتگو اورآزادی مارچ کےشرکاءسےخطاب کرتےہوئےمولانا فضل الرحمان کاکہناتھا کہہماری افواج نےملک میں امن قائم کرنے کے لیےبہت سی قربانیاں دی ہیں,ہم ملک کوامن کاگہوارہ بنائیں گے،حکومتی مذاکراتی کمیٹی میں ہمارے موقف کو سمجھنے کی صلاحیت نہیں ہے،حکومتی کمیٹی کو کہا ہے کہ  آنا ہےتوہمارےپاس استعفیٰ لےکرآؤ،دھاندلی سے آنے والوں کوحکومت نہیں  کرنےدیںگے،ان کی پوری سیاست مخالفین کوچورکہنے پرقائم ہے،عمران خان امریکہ میں بھی ہمیں گالیاں دیتےرہے،جعلی اسمبلیوں کی قراردادوں کی قانون میں کوئی حیثیت نہیں،جعلی حکومت کی قانون سازی بھی جعلی ہوتی ہے،منظور ہونےوالےقوانین کی کوئی قانونی حیثیت نہیں ہے،موجودہ حکومت کوقبضہ گروپ سمجھتے ہیں۔مولانافضل الرحمان نےکہاکہ ہمآئین،قانون اورپارلیمنٹ کی بالا دستی کی بات کرتے ہیں،تمام اپوزیشن پارٹیاں ایک پلیٹ فارم پر ہیں،بیوروکریسی کو بھی یکجہتی کی دعوت دیتےہیں۔انہوں نے کہا کہ جلدبازی میں ملک کو آخر کہاں لےجایاجارہا ہے؟ہماری قربانیاں اس لیےتھیں کہ ایسےلوگ حکمرانی کریں؟ایڈہاک ازم سے ملک نہیں چلا کرتے ۔انہوں نے کہا کہ ایف بی آر نے کہا ہے کہ کوئی منی لانڈرنگ نہیں ہوئی،ایف بی آر نے کہامنی لانڈرنگ سے کوئی پیسہ باہر نہیں گیا, 10 سال میں لیےگئےقرضوں کی تحقیقاتی رپورٹ آگئی ہے۔

دوسری طرف نجی  ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئےمولانا  فضل الرحمان کاکہنا تھا کہ سابق وزیراعظم نواز شریف ناجائزطورپرگرفتارتھے،قومی احتساب بیورو (نیب) کواستعمال کرکے حزب  اختلاف کے رہنماؤں کو  جیلوں میں ٹھونسا جا رہا ہے اور سیاست دان ناجائز طور پر جیلوں میں قید ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ ملک اور سیاست کے نظام کو جام کیا جا رہا ہے، اسی کو آمریت کہتے ہیں، ہم نے جمود کو توڑا ہے اور میں خوش ہوں کہ ہم کسی کے کام آ رہے ہیں۔مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ ہر زمانے میں جب کسی کو  سیاسی انتقام کا نشانہ  بنانے کے لئے گرفتار کیا جاتا ہے تو قانون کا سہارا لیا جاتا ہے اور ملکی سیاست کا جنازہ نکالا جاتا ہے۔مولانا  فضل  الرحمان  نے وزیر اعظم عمران  خان کا نام لئے بغیر انہیں شدید تنقید کا  نشانہ بناتے ہوئے کہا کہوہ حزب اختلاف میں تھا تو بھی تنہاتھا ،آج حکومت میں ہے تو بھی تنہا ہے،اس وقت پاکستان مالیاتی بحران کا شکار ہے اور آنے والے وقت میں مزید بحرانوں کی جانب بڑھ رہے ہیں، خدانخواستہ اگر اگلا بجٹ بھی ان نااہلوں نے پیش کیا تو ملک مزید خسارے میں چلا جائے گا ہم آج ملک کو بچانے کیلئے آئے ہوئے ہیں اور سلیکٹڈ کے استعفیٰ سے کم کسی بات پر راضی نہیں ہوں گے۔

مزید : قومی /اہم خبریں


loading...