جی آئی ڈی سی اور دیگر سرچارجز،وزارت پانی و بجلی ،قانون اور نیپرا سے جواب طلب

جی آئی ڈی سی اور دیگر سرچارجز،وزارت پانی و بجلی ،قانون اور نیپرا سے جواب طلب

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے بجلی کے بلوں میں جی آئی ڈی سی اور دیگر سرچارجزعائد کرنے کے خلاف دائر درخواست پروزارت پانی و بجلی ،وزارت قانون اور نیپرا سے جواب طلب کر لیاہے ۔ جسٹس عائشہ اے ملک نے یہ جواب طلبی جوڈیشل ایکٹوازم پینل کی درخواست پر کی ہے ۔درخواست گزار کی طرف سے اظہرصدیق ایڈووکیٹ نے عدالت میں موقف اختیار کیا کہ حکومت نے بجلی کے بلوں میں جی آئی ڈی سی سرچارج عائد کر دیا ہے اور اس سرچارج کے ذریعے اب تک عوام سے 11ارب روپے اکٹھے کئے جا چکے ہیں، انہوں نے بنچ کو بتایا کہ بجلی کے بلوں میں نیلم جہلم سرچارج، ٹیرف سرچارج بھی عائد کئے گئے ہیں، حکومت بجلی کے بلوں کے ذریعے عوام سے پیسہ اکٹھا کر رہی ہے ، بجلی کے بلوں میں عائد سرچارجز آئین کے آرٹیکل 9 ،14 اور 25کی خلاف ورزی ہے ،ان سرچارجز کو کالعدم کیا جائے، عدالت نے وزارت پانی وبجلی ،وزارت قانون اور نیپر اکو نوٹسز جاری کرتے ہوئے 13اکتوبر تک جوا ب طلب کر لیاہے۔

مزید :

صفحہ آخر -