پاکستانی ڈرون کی تیاری میں چین کا کوئی کردار نہیں،ایئر چیف مارشل

پاکستانی ڈرون کی تیاری میں چین کا کوئی کردار نہیں،ایئر چیف مارشل

  

اسلام آباد/واشنگٹن(اے این این) پاک فضائیہ کے سربراہ ایئر چیف مارشل سہیل امان نے واضح کیا ہے کہ پاکستانی مسلح ڈرون کی تیاری میں چین کا کوئی کردار نہیں،پاکستانی انجینئرز نے یہ ٹیکنالوجی خود تیار کی ہے،آپریشن ضرب عضب کی سرویلنس صلاحیت میں امریکہ کا بڑا ہاتھ ہے،پاکستانی فورسز کو مخصوص ریڈار فراہم کئے جائیں تو بہتر کام کر پائیں گی،امریکہ کو ملا فضل اللہ کو نشانہ بنانے کا کہا تھا تاہم امریکی بھی اسے تلاش نہیں کر پائے۔امریکی اخبار واشنگٹن ٹائمز کو انٹرویو میں پاک فضائیہ کے سربراہ ایئر چیف مارشل سہیل امان نے کہا کہ مسلح ڈرون کی تیاری میں چین نے پاک فوج کی مدد نہیں کی۔ چین کی طرف سے پاکستان فوج کی مدد کی رپورٹیں غلط ہیں اور پاکستانی انجینئرز نے یہ ٹیکنالوجی خود تیار کی ہے۔انھوں نے کہا کہ پاکستان ایروناٹیکل کمپلیکس نے جے ایف 17تھنڈر لڑاکا طیارے تیار کیے ہیں اور اسی قوم نے 1990sکے دوران جوہری ہتھیاروں کو بھی تیار کیا۔ پاک فضائیہ کے سربراہ نے کہا کہ پاک افغان سرحد پر 1لاکھ 75ہزار جوان تعینات ہیں جنہوں نے 3000سے زائد عسکریت پسندوں کو ہلاک کیا اور کئی علاقے القاعدہ اور طالبان سے خالی کرائے۔انہوں نے کہا کہ اس آپریشن کے لئے درکار سرویلنس صلاحیت میں امریکہ کا بڑا ہاتھ ہے۔ انھوں نے کہا کہ عسکریت پسندوں کی سرحد پار نقل و حرکت جاری ہے اگر واشنگٹن پاکستانی فورسز کو مخصوص ریڈار فراہم کرے گا تو پاکستانی فورسز بہترین کام کر پائیں گی۔ انہوں نے کہا کہ پاک فوج نے گزشتہ برس امریکہ سے فضل اللہ کو نشانہ بنانے کا کہا تھا تاہم امریکی اسے تلاش نہیں کر پائے۔

مزید :

کراچی صفحہ اول -