چار سالہ پاکستانی بچی نے عدالت کو اپنا فیصلہ واپس لینے پر مجبور کر دیا

چار سالہ پاکستانی بچی نے عدالت کو اپنا فیصلہ واپس لینے پر مجبور کر دیا
چار سالہ پاکستانی بچی نے عدالت کو اپنا فیصلہ واپس لینے پر مجبور کر دیا

  


لاہور (ویب ڈیسک) لاہور ہائیکورٹ میں چار سالہ بچی نور فاطمہ نے والدہ کے حوالے کرنے کا حکم سنانے پر باپ کے ساتھ جانے کیلئے چیخ و پکار شروع کر دی۔ بچی چیخ چیخ کر کہتی رہی کہ میں نے پاپا کے پاس جانا ہے۔ بچی کی چیخ و پکار پر فاضل عدالت نے والد اور والدہ کو پھر صلح کا موقع فراہم کر دیا۔ فاضل عدالت نے بچی کی چیخ و پکار سن کر کیس دوبارہ کال کر لیا۔ عدالت نے دونوں میاں بیوی کی رضامندی سے فریقین کو صلح کا موقع دیدیا۔ فاضل عدالت نے قرار دیا کہ بچی کے مستقبل کیلئے آپ دونوں اپنی رنجشیں ختم کر لیں۔ گلناز بی بی کی درخواست پر پولیس نے خاوند مبارک کو بچی سمیت پیش کیا۔ عدالت نے بچی کو پہلے والدہ کے حوالے کرنے کا حکم دیا مگر دوبارہ کیس کال کرنے پر فریقین کو صلح کا موقع دے دیا اور بچی کو والد کے ساتھ بھیج دیا۔ فاضل عدالت نے حکم دیا کہ آئندہ سماعت پر آپ بچی کو لے کر عدالت میں پیش ہونگے۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور


loading...