ڈینگی میں مبتلابچی کی تکلیف دہ کہانی،سرکاری ہسپتال کے ڈاکٹرز ڈینگی کے مریضوں کے تشخیصی ٹیسٹ کرانے سے گریزاں ،افسوسناک وجہ سامنے آگئی

ڈینگی میں مبتلابچی کی تکلیف دہ کہانی،سرکاری ہسپتال کے ڈاکٹرز ڈینگی کے ...
ڈینگی میں مبتلابچی کی تکلیف دہ کہانی،سرکاری ہسپتال کے ڈاکٹرز ڈینگی کے مریضوں کے تشخیصی ٹیسٹ کرانے سے گریزاں ،افسوسناک وجہ سامنے آگئی

  


لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) سروسز ہسپتال کے ڈاکٹروں کی مجرمانہ غفلت ، ڈینگی بخار میں مبتلا سینئر صحافی کی معصوم بچی کا چارروز تک ٹیسٹ نہ کروایا ، نارمل بخار کی ادویات دیتے رہے ،باہر سے ٹیسٹ کروانے پر بچی میں ڈینگی کی تشخیص ہوگئی ۔ تفصیلات کے مطابق سینئر صحافی خالد شہزاد فاروقی کی معصوم بچی چار روز قبل ڈینگی بخار میں مبتلا ہوئی جس پر وہ اس کوسروسز ہسپتال لے کرگئے لیکن ڈاکٹرز نے بچی کا ٹیسٹ کروانے کی بجائے نارمل بخار کی دوائی لکھ کردیدی اور بچی کو گھر بھیج دیا۔ دوائی کھانے کے باوجود بچی کی طبیعت نہ سنبھلی تو بچی کو پھر سروسز ہسپتال جایا گیا مگر اس بار بھی ڈاکٹرز نے دوائی بدل دی مگر بچی کا ٹیسٹ نہ کروایا ۔ خالد شہزاد فاروقی بچی کوچار روز تک مسلسل ہسپتال لے جاتے رہے لیکن ہر بار کہنے کے باوجود ڈاکٹر ز نے بچی کا ٹیسٹ نہ کروایا اور دوائی بدل دی جس پر بچی کی حالت طبیعت انتہائی خراب ہوگئی ۔ خالد شہزاد فاروقی بچی کوتشویشناک حالت میں پانچویں روزہسپتال لیکر گئے اور ہسپتال کے سامنے واقع پراوئیوٹ لیبارٹری سے اس کا ڈینگی ٹیسٹ کروایا تو بچی میں ڈینگی بخار کی تصدیق ہوگئی جس پر ڈاکٹر ز میں تھرتھلی مچ گئی اوربچی کو فوری طور پر ہسپتال میں ایڈ مٹ کرلیاگیا۔ خالد شہزاد فاروقی کی جانب سے ایک سینئر ڈاکٹر سے پوچھنے پر کہ بار بار اصرار کے باوجود چار روز تک ان کی بیٹی کا ڈینگی ٹیسٹ کیوں نہیں کروایا گیا ؟تو ڈاکٹر نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ جس طرح کسی علاقے کا تھانیدار اپنے تھانے میں ڈکیتی کا پرچہ درج نہیں کرتا کہ اس طرح اس کی بدنامی ہوتی ہے ، اسی طرح ہسپتال انتظامیہ بھی مریضوں کے ڈینگی ٹیسٹ کرنے ہچکچاتی ہے کیونکہ ڈینگی کی تشخیص بدنامی کاباعت ہوتی ہے ۔ صحافی تنظیموں نے ڈاکٹر وں کی مجرمانہ روش کے خلاف شدید احتجاج کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار اوروزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد سے نوٹس لیکر سنگین مجرمانہ غفلت برتنے پر سروسزہسپتال کی انتظامیہ کیخلاف سخت کارروائی کا مطالبہ کیاہے ۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور


loading...