شب بھر رواں رہی گلِ مہتاب کی مہک| ظفر اقبال |

 شب بھر رواں رہی گلِ مہتاب کی مہک| ظفر اقبال |
 شب بھر رواں رہی گلِ مہتاب کی مہک| ظفر اقبال |

  

 شب بھر رواں رہی گلِ مہتاب کی مہک

پو پھوٹتے ہی خشک ہوا چشمۂ فلک

موج ہوا سے کانپ گیا روح کا چراغ

سیل صدا میں ڈوب گئی یاد کی دھنک

پھر جا رکے گی بجھتے خرابوں کے دیس میں

سونی سلگتی سوچتی سنسان سی سڑک

رُخ پھیر کر جو ابرِ شبانہ میں چھپ گیا

جی میں پھرا کرے گی اسی چاند کی چمک

پھر پچھلے پہر آئنۂ اشک میں ظفرؔ

لرزاں رہی وہ سانولی صورت سویر تک

شاعر: ظفر اقبال

(مجموعۂ کلام: آبِ رواں؛سالِ اشاعت،1978)

Shab   Bhar   Rawaan   Rahi   Gul-e-Mehtaab    Ki   Mahak

Pao   Phoot'tay    Hi    Khushk    Hua   Chashma-e-Falak

Maoj-e-Hawa   Say    Kaanp    Gaya    Rooh   Ka   Charaagh

Sail-e-Sadaa    Men   Doob   Gai    Yaad    Ki   Dhanak

Phir   Ja    Rukay   Gi    Bujhtay    Kharaabon   K    Dais   Men

Sooni  ,    Sulagti  ,   Sochti  ,   Sunsaan    Si   Sarrak

Rukh    Phair    Kar    Jo    Abr -e- Shabaana    Men    Chhup   Gaya

Ji    Men    Phira    Karay    Gi    Usi    Chaand    Ki   Mahak

Phir    Pichhlay    Pahar    Aaina-e- Ashk    Men   ZAFAR

Larzaan   Rahi    Wo    Saanwli    Soorat    Sawair   Tak

Poet: Zafar  Iqbal

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -