ترے لبوں پہ اگر سرخیِ وفا ہی نہیں | ظفر اقبال |

ترے لبوں پہ اگر سرخیِ وفا ہی نہیں | ظفر اقبال |
ترے لبوں پہ اگر سرخیِ وفا ہی نہیں | ظفر اقبال |

  

ترے لبوں پہ اگر سرخیِ وفا ہی نہیں 

تو یہ بناؤ یہ سج دھج تجھے روا ہی نہیں 

میں تیری روح کی پتی کی طرح کانپ گیا 

ہوائے صبحِ سبک گام کو پتا ہی نہیں 

کسی امید کے پھولوں بھرے شبستاں سے 

جو آنکھ مل کے اٹھا ہوں تو وہ ہوا ہی نہیں 

فرازِ شام سے گرتا رہا فسانۂ شب 

گدائے گوہرِ گفتار نے سنا ہی نہیں 

چمک رہا ہے مری زندگی کا ہر لمحہ 

میں کیا کروں کہ مری آنکھ میں ضیا ہی نہیں 

شاعر: ظفر اقبال

(مجموعۂ کلام: آبِ رواں؛سالِ اشاعت،1978)

Tiray    Labon   Pe   Agar   Surkhi-e-Wafaa     Hi    Nahen

To   Yeh    Banaao   Yeh   Saj   Dhaj    Tujhay   Rawaa   Hi   Nahen

Main   Teri   Rooh    Ki   Patti   Ki    Tarah   Kaanp   Gaya

Hawaa-e-Subh-e- Subak    Gaam    Ko   Pataa   Hi   Nahen

Kisi    Ummeed   K     Phoolon    Bharay    Shabistaan   Men

Jo    Aankh    Mall    K    Utha   Hun   To    Wo    Hawaa   Hi   Nahen

Faraaz-e- Shaam    Say    Girta    Raha    Fasaana-e-Shab

Gadaa-e-Gohar-e-Guftaar    Nay   Sunaa   Hi   Nahen

Chamak    Raha    Hay    Miri    Zindagi    Ka    Har   Lamha

Main    Kaya     Karun    Keh    Miri      Zindagi    Men    Ziaa   Hi   Nahen

Poet: Zafar   Iqbal

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -