یہاں کسی کو بھی کچھ حسبِ آرزو نہ ملا | ظفر اقبال |

یہاں کسی کو بھی کچھ حسبِ آرزو نہ ملا | ظفر اقبال |

  

یہاں کسی کو بھی کچھ حسبِ آرزو نہ ملا 

کسی کو ہم نہ ملے اور ہم کو تو نہ ملا 

غزالِ اشک سرِ صبح دوبِ مژگاں پر 

کب آنکھ اپنی کھلی اور لہو لہو نہ ملا 

چمکتے چاند بھی تھے شہرِ شب کے ایواں میں 

نگارِ غم سا مگر کوئی شمع رو نہ ملا 

انہی کی رمز چلی ہے گلی گلی میں یہاں 

جنہیں ادھر سے کبھی اذنِ گفتگو نہ ملا 

پھر آج مے کدۂ دل سے لوٹ آئے ہیں 

پھر آج ہم کو ٹھکانے کا ہم سبو نہ ملا 

شاعر: ظفر اقبال

(مجموعۂ کلام: آبِ رواں؛سالِ اشاعت،1978)

Yahaan    Kisi   Ko   Bhi    Kuchh   Hasb-e-Aarzu   Na   Mila

Kisi   Ko   Ham   Na   Milay   Aor   Ham   Ko  Tu   Na   Mila

Ghazaal -e-Ashk    Sar  -e-   Subh    Doob-e-Mizzgaan   Par

Kab    Aankh    Apni    Khuli    Aor    Lahu    Lahu   Na   Mila

Chamaktay    Chaand    Bhi    Thay    Shehr-e-Shab   K    Aiwaan   Men

Nigaar-e-Gham    Sa    Magr    Koi   Shama   Ru   Na   Mila

Unhi    Ki    Ramz    Chali    Hay    Gali    Gali    Men   Yahan

Jinhen    Udhar    Say    Kabhi    Izn-e-Guftagu   Na   Mila

Phir    Aaj    Maykada-e- Dil    Say    Laot    Aaey   Hen

Phir     Aaj    Ham   Ko    Thikaanay    Ka    Hamsubu   Na   Mila

Poet: Zafar    Iqbal

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -